09:13 am
پاکستان کی وہ معروف یونیورسٹی جہاں طلبا اور طالبات کے اکھٹے گھومنے پر پابندی عائد کردی گئی ،ایسا کرنا غیر اسلامی اور غیر اخلاقی عمل قرار

پاکستان کی وہ معروف یونیورسٹی جہاں طلبا اور طالبات کے اکھٹے گھومنے پر پابندی عائد کردی گئی ،ایسا کرنا غیر اسلامی اور غیر اخلاقی عمل قرار

09:13 am

پشاور(آن لائن) باچا خان یونیورسٹی چارسدہ میں طلبا اور طالبات کے اکھٹے گھومنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔ یونیورسٹی انتظامیہ کی طرف سے جاری نوٹیفیکیشن کے مطابق طلبا اور طالبات کا جوڑے بنانا غیر اسلامی اور غیر اخلاقی عمل ہے۔ کیمپس میں اکھٹے گھومنے والوں کے خلاف سخت کارروائی ہوگی۔ یونیورسٹی انتظامیہ نے سخت تنبیہہ کے ساتھ ساتھ یہ بھی کہا ہے کہ اس کوڈ آف کنڈکٹ کی خلاف ورزی کرنے والے طلبہ کو جرمانہ کرکے انکے والدین کو یونیورسٹی بھی بلایا جائے گا۔باچا خان یونیورسٹی انتظامیہ کی طرف سے طلبہ پر پابندی کا یہ نوٹیفیکیشن 23ستمبر کو جاری کیا
 
گیا۔واضح رہے کہ اس سے قبل ستمبر کے دوسرے ہفتے میں خیبر پختونخوا میں پی ٹی آئی حکومت کی طرف سے سرکاری تعلیمی اداروں میں طالبات کے لئے پردہ لازمی قرار دیا گیا تھا۔تاہم ذرائع ابلاغ میں مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی طرف سے شدید تنقید کے بعد وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے سرکاری اسکولوں میں طالبات کے لیے پردہ لازمی قرار دینے پر نوٹس لیتے ہوئے محکمہ تعلیم کو اعلامیہ واپس لینے کی ہدایت کر دی تھی۔خیبر پختونخوا کے سرکاری اسکولوں میں طالبات کے لیے پردہ لازمی کرنے کے معاملے پر حکومت اختلافات کا شکار ہو گئی۔محکمہ تعلیم کی جانب سے جلد صوبے بھر کے سرکاری اسکولوں میں طالبات کے لیے پردے کے فیصلے پر عملدرآمد شروع کرنے کا اعلان کیا گیا تھا تاہم جلد ہی اختلافات سامنے آ گئے اور ترجمان صوبائی حکومت نے سرکاری اسکولوں میں پردے کی پابندی سے لاعلمی ظاہر کر دی۔ وزیر اطلاعات خیبر پختونخوا شوکت یوسفزئی نے کہا کہ صرف ایک ضلع میں والدین کی مرضی پر اعلامیہ جاری کیا گیا۔ پردہ مذہب کا حصہ ہے لیکن زبردستی لاگو نہیں کیا جا سکتا۔انہوں نے کہا کہ صوبے میں طالبات کے لیے چادر یا عبایا لازمی قرار دینے کی کوئی تجویز زیر غور نہیں جبکہ متعلقہ اسکولوں کو اعلامیہ واپس لینے کی ہدایت کر دی گئی ہے۔واضح رہے کہ اس سے قبل مشیر تعلیم خیبر پختونخوا ضیا اللہ بنگش نے ہری پور اور پشاور کے بعد صوبے بھر میں فیصلہ نافذ کرنے کا اعلان کیا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ صوبے کے ماحول کی وجہ سے طالبات کے لیے پردہ لازمی کرنے کا فیصلہ کیا جس کی وجہ بچوں کا تحفظ اور والدین کی تسلی کرانا ہے۔

تازہ ترین خبریں