10:37 am
مولانا کو منع کر دیا گیا ہے ، اب دھرنا نہیں ہو گا اور اس کے بدلے انہیں کیا دیا جائے گا

مولانا کو منع کر دیا گیا ہے ، اب دھرنا نہیں ہو گا اور اس کے بدلے انہیں کیا دیا جائے گا

10:37 am

اسلام آباد (ویب ڈیسک) جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے حکومت کے خلاف مارچ کرنے کا اعلان کر رکھا ہے جس کے لیے وہ اپوزیشن جماعتوں بالخصوص مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی سے رابطہ کر رہے ہیں۔ اس حوالے سے سینئیر اینکر پرسن نے نیا دعویٰ کر دیا ہے۔تفصیلات کے مطابق مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں سینئیر اینکر پرسن عمران خان نے کہا کہ مولانا کو منع کر دیا گیا ہے۔مگر انہیں کچھ فیس سیونگ ضرور ملے گی۔
انہوں نے دعویٰ کیا کہ پاکستان پیپلز پارٹی اورمسلم لیگ ن پہلے سے آن بورڈ تھے۔ اب اکتوبر دھرنا نہیں ہو گا۔مولانا کو منع کر دیا گیا ہے۔ مگر انہیں کچھ فیس سیونگ ضرور ملے گی۔ پیپلز پارٹی اور ن لیگ پہلے سے آن بورڈ تھے۔ اکتوبر دھرنا نہیں ہو گا۔واضح رہے کہ اس سے قبل مولانا فضل الرحمان کے اسلام آباد مارچ کو سکیورٹی تھریٹ بھی قرار دیا جا رہا تھا۔مولانا فضل الرحمان اسلام آباد مارچ میں شرکت کے لیے اپوزیشن جماعتوں بالخصوص مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی کو دعوت دے رہے ہیں لیکن ان دونوں جماعتوں کی جانب سے تاحال مولانا فضل الرحمان کے مارچ میں شرکت کرنے کے حوالے سے کوئی بیان نہیں دیا۔مولانا کے اسلام آباد مارچ کو سکیورٹی تھریٹ بھی قرار دیا جا رہا ہے۔ ذرائع کے مطابق جمعیت علمائے اسلام (ف) کا مارچ کا منصوبہ اسلام آباد کے لیے سیکورٹی تھریٹ ثابت ہوسکتا ہے ۔ مارچ کی آڑ میں شر پسند عناصر گڑ بڑ پھیلا سکتے ہیں ۔ ذرائع کے مطابق جماعت کے بعض افراد کے ایسے گروپوں کے رابطے ہیں جو سابق فاٹا اور کے پی میں شدت پسند کارروائیوں میں ملوث رہے ، ایسے عناصر مارچ میں شامل ہوکر گڑ بڑ پھیلا سکتے ہیں۔ یاد رہے کہ مولانا فضل الرحمان نے تاحال مارچ کی تاریخ سے متعلق بھی حتمی اعلان نہیں کیا ۔