03:53 pm
زیادہ تر حملے تامل ٹائیگرز نے کیے، وہ ہندو تھے، کسی نے ہندو ازم کو دہشتگردی سے نہیں جوڑا

زیادہ تر حملے تامل ٹائیگرز نے کیے، وہ ہندو تھے، کسی نے ہندو ازم کو دہشتگردی سے نہیں جوڑا

03:53 pm

نیویارک (مانیٹرنگ ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان نے جنرل اسمبلی میں اپنے خطاب کے دوران کہا ہے کہ اسلامو فوبیاآج کی دنیا کا بڑھتا ہوا ایک مسئلہ ہے۔اسلام صرف ایک ہے جو ہمیں نبی علیہ السلام نے سکھایا انتہا پسند یا دہشتگرد اسلام کاکوئی تصور نہیں ہے۔روشن خیال اسلام کی اصطلاح کی ماضی کی پاکستانی حکومت کی ایجاد ہے۔اسلامو فوبیا کی وجہ سے مغرب میں عورتوںکا حجاج پہننا مشکل ہو گیا ہے ہے۔دہشتگرد کا کسی بھی مذہب کے ساتھ کوئی بھی تعلق نہیں ہیں۔
کوئی بھی مذہب انتہا پسندی نہیں سکھاتا ۔ انتہا پسند تمام مذاہب کے ماننے والے معاشروں میں موجود ہیں۔ نائن الیون کے بعد اسلامو فوبیا میں اضافہ ہوا۔جسکے نتیجے میں دنیا میں تقسیم بڑھی۔ماضی میں خود کش حملوں کو اسلام سے جوڑا گیا۔کچھ لیڈرز نےبراہ راست اسلام کو دہشتگردی کے ساتھ جوڑا۔ نائن الیون سے پہلے زیادہ تر خود کش حملے تامل ٹائیگرز نے کیے۔ تامل ٹائیگرز ہندو تھے لیکن کسی نےبھی ہندو ازم کو دہشتگردی کے ساتھ نہیں جوڑا۔ مغربی لوگوں کو یہ سمجھ نہیں آتا کہ نبی کریم وﷺ کی توہین مسلمانوں کے لئے بہت بڑا مسئلہ ہے۔جب اسلام کی توہین پر مسلمانوں کو رد عمل سامنے آتا ہے تو ہمیں دہشتگرد کہہ دیا جاتا ہے۔

تازہ ترین خبریں