04:25 pm
جے یوآئی (ف )کی اکتوبرمیں آزادی مارچ کی تیاریاں مکمل

جے یوآئی (ف )کی اکتوبرمیں آزادی مارچ کی تیاریاں مکمل

04:25 pm

اسلام آباد(آن لائن) جے یوآئی (ف )کی اکتوبرمیں آزادی مارچ کی تیاریاں مکمل،یونین کونسل سطح پربھی کمیٹیاں تشکیل دیدی گئی ہیں جبکہ فنڈریزنگ کاعمل شروع کردیا گیا ہے ۔جے یو آئی( ف) کے رہنمائوں کا کہنا ہے کہ موجودہ حکومت نے غریب عوام کاجینادوبھرکردیا،موجودہ حکمران ناکام اورنااہل ہیں،ملک میں سول مارشل لاء لگاہواہے،میڈیاآزادنہیں ہے،مولانافضل الرحمن کی قیادت میں لاکھوں افراداسلام آبادمیں داخل ہوں گے
اورسلیکٹڈحکمرانوں سے نجات دلائیں گے،آزادی مارچ حکومت کے درودیوارہلاد ے گا،چمن دھماکے کی بھرپورمذمت کرتے ہیں ،مولاناحنیف کے قاتلوں کوفی الفورگرفتارکیاجائے، ۔ تفصیلات کے مطابق جے یوآئی این اے 52کی مجلس عاملہ، مجلس شوریٰ اورتمام یوسیزکے نمائندوں کامشترکہ اجلاس جامعہ مسجدالیاسیہ ترامڑی مرکزمیں زیرصدارت امیراین اے 52مولانا عبدالرشیدتوحیدی منعقداہوا۔اجلاس میں صوبائی قیادت مولاناعبدالمجیدہزاروی اورمفتی عبداللہ نے بھی شرکت کی۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے مولاناعبدالمجیدہزاروی،مفتی عبداللہ،امیراین اے 52مولانا عبدالرشید توحیدی،مفتی سعیدالرحمن،قاری عتیق ودیگرنے کہاکہ ہم آزادی مارچ کیوں کرنے جارہے ہیں جب سے نئی حکومت بنی قائدجمعیت کاجوپہلے دن سے مؤقف تھاالحمدللہ آج تک وہی مؤقف ہے اوراس میں کوئی بھی تبدیلی نہیں آئی کہ 2018ء کے الیکشن دھاندلی زدہ ہیں اوریہ حکمران منتخب نمائندے نہیں ہیں اس لئے ہمیں حلف ہی نہیں اٹھاناچاہئے آج بھی الحمدللہ قائدجمعیت اورپوری قیادت اس بات پرقائم ہے کہ یہ حکومت ناکام بھی ہے اورنااہل بھی ہے۔جب سے حکومت آئی ملک آج سے سا ل پہلے جہاں کھڑاتھاآج اس سے کہیں زیادہ بحرانی کیفیت میں چلاگیاہے،اس وقت ملک تاریخ کے بدترین دورسے گزررہاہے،پوری اپوزیشن جیلوں میں بندہے،میڈیاآزادنہیں ہے ملک میں اس وقت مارشل لاء سے بھی بدترین دورہے ایسے حالات میں ایک تویہ ہے کہ ہم خاموشی سے بیٹھ جائیں یاپھراپنے حق کیلئے نکلیں اورموجودہ نااہل اورناکام ترین حکمرانوں سے عوام کی جان چھڑائیں اوراس کیلئے ہم انشاء اللہ جلدہی تاریخ کااعلان کرنے والے ہیں اورہم ہرحال میں اسلام آبادمیں آزادی مارچ کیلئے آئیں گے۔وزیراعظم نے اقوام متحدہ کے اجلاس کے دوران ناموس رسالت?کے عنوان پرجذباتی اندازسے عقیدت کااظہارتوکیامگرآسیہ مسیح کی اعزازکے ساتھ رخصتی نے قول وفعل میں فاصلے کوجنم دیا۔انہوں نے دوران خطاب خودکومکمل مذہبی ظاہرتوکیامگردیس میں دین دشمن پالیسیوں، مساجدکو گرانا، مدارس کے خلاف ناجائزاقدامات،شراب پرٹیکس معافی،قادیانیت کیلئے کرتارپورراہداری کھولنا،پاک افغان بارڈرپررکاوٹیں کھڑی کرنا، سینٹ میں ناموس رسالت ترمیمی بل لانا،فحاشی وعریانیت کوپروموٹ کرنانے میرے وزیراعظم کے قول وفعل میں تضادات کے پہاڑلاکھڑے کردیئے ایسے حالات میں جب ملک سیاسی،معاشی،مذہبی ہرلحاظ سے بدترین دور کی طرف جارہاہے توایسے میں ہم سب کونکلناہوگا اورقائدجمعیت کے ہاتھ مضبوط کرنے ہوں گے،کارکنان تیاری کریں بہت جلداعلان ہوگااس کیلئے یونین کونسلزسطح پرکمیٹیاں تشکیل دیں اور آزادی مارچ کیلئے فنڈنگ کاسلسلہ شروع کیاجائے،اوراس کے ساتھ تمام یوسیزمیں تمام کارکنان اپنے آنے والے مہمانوں کی تیاری کابھی جائزہ لیں،اکتوبرمارچ کیلئے کارکنان اپنی اپنی یوسیزمیں بھرپورتیاری کریں اورتمام اپوزیشن پارٹیوں کے کارکنان وذمہ داران سے ملاقاتیں کریں۔آخرمیں جنرل سیکرٹری جمعیت علماء اسلام اسلام آبادمفتی عبداللہ نے چمن بم دھماکے کی شدیدالفاظ میں مذمت کی اوراس میں شہیدہونے والے جے یوآئی کے مرکزی ڈپٹی جنرل سیکرٹری مولاناحنیف کی شہادت پرگہرے دکھ ورنج کااظہارکیاگیااورحکومت وقت اورسیکیورٹی اداروں سے مطالبہ کیاگیاکہ واقعے کے کرداروں کوجلدبے نقاب کیاجائے اورمولاناکے قاتلوں کوکیفرکردارتک پہنچاکرپھانسی پرلٹکایاجائے نہیں توجمعیت علماء اسلام ملک بھرمیں بھرپوراحتجاج کریگی اورقاتلوں کی گرفتاری تک ہم چین سے نہیں بیٹھیں گے جس کی تمام کارکنان نے تائیدبھی کی۔ اس کے بعدمولاناحنیف کے بلنددرجات کیلئے دعائے مغفرت بھی کی گئی کہ اللہ مولاناکی مغفرت اورانہیں جنت الفردوس میں اعلی مقام عطافرمائے اورلواحقین کوصبرجمیل عطافرمائے۔اجلاس میں ضلع بھرسے کثیرتعدادمیں ذمہ داران وکارکنان نے شرکت کی۔اجلاس میں امیراین اے52مولاناعبدالرشیدتوحیدی،سرپرست مفتی احمدالرحمن،جنرل سیکرٹری مفتی سعیدالرحمن،سینئرنائب امیرمولاناعتیق الرحمن،مولانایاسرعباسی، مولاناعبدالرزاق،قاری یوسف دیشانی،قاری سیدرحمت نبی ہاشمی،مولانامنظور، مولانا یاسراقبال، قاضی ظہورصاحب، قاری منیرعباسی، مولاناعبیدالرحمن،مولاناعبدالوہاب،مولاناثناء اللہ،سمین جان، نصراللہ،عظیم اللہ ودیگر کثیرتعداد میں علماء کرام اورکارکنان نے شرکت کی۔