08:56 am
  ’’ عمران خان کے سٹاف کا کہنا ہے کہ بشریٰ بی بی کا عکس شیشے میں نظر نہیں آتا ‘‘

’’ عمران خان کے سٹاف کا کہنا ہے کہ بشریٰ بی بی کا عکس شیشے میں نظر نہیں آتا ‘‘

08:56 am

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) گذشتہ روز بھارت کے مشہور ٹی وی چینل اے این آئی نے اپنی ویب سائٹ پر ایک نیوز رپورٹ شائع کی جس میں دعویٰ کیا گیا کہ وزیراعظم عمران خان کے اسٹاف کا کہنا ہے کہ خاتون اول بشریٰ بی بی کا آئینے میں عکس نظر نہیں آتا۔ سوشل میڈیا پر اے این آئی کی اس رپورٹ کو خاصی مقبولیت حاصل ہوئی اور پاکستان کی جانب سے بھارتی میڈیا کو جھوٹا اور مضحکہ خیز پراپیگنڈہ کرنے پر سخت تنقید کا نشانہ بھی بنایا گیا۔ کچھ دیر بعد ہی بھارتی چینل کی ویب سائٹ سے اس خبر کو ڈیلیٹ کر دیا گیا لیکن اس خبر کے اسکرین شاٹس سوشل میڈیا پر کئی اکاؤنٹس سے پوسٹ کیے گئے۔ بھارتی میڈیا کی رپورٹ میں بتایا گیا
کہ یہ دعویٰ پاکستان کے کیپٹل ٹی وی نے کیا ہے ۔ بھارتی میڈیا نے عمران خان کے دورہ امریکہ سے قبل سعودی عرب کے دورہ اور عمرہ کی ادائیگی کے موقع پر لی گئیں بشریٰ بی بی اور عمران خان کی تصاویر کو ذکر بھی کیا اور کہا کہ عمران خان کے دورہ امریکہ سے قبل بشریٰ بی بی کو سر سے لے کر پاؤں تک برقعہ میں دیکھا گیا تھا۔ بھارتی چینل کے اس دعوے کے بعد پاکستان کے نجی ٹی وی چینل کیپٹل ٹی وی کا بھی وضاحتی بیان سامنے آ گیا۔ مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر کیپٹل ٹی وی کی جانب سے جاری پیغام میں کہا گیا کہ بھارتی میڈیا نے فوٹو شاپ کی مدد سے کیپٹل ٹی وی کا ٹیمپلیٹ تبدیل کر کے چلایا اور اسے عمران خان کی اہلیہ اور خاتون اول بشریٰ بی بی کے خلاف پراپیگنڈہ کے لیے استعمال کیا۔ کیپٹل ٹی وی کے مطابق جھوٹی اور بے بنیاد خبر کو سچ بنا کر پیش کرنے کے لیے کیپٹل ٹی وی کا لوگو استعمال کرنے کی بھارتی ٹی وی کی کوشش قابل مذمت ہے۔ کیپٹل ٹی وی نے کبھی ایسی کوئی خبر نہیں دی یہ سب جعلی ہے۔ بھارتی میڈیا کی جانب سے فوٹو شاپ کی گئی تصاویر چلانا غیر ذمہ دار صحافت کا ثبوت ہے۔

تازہ ترین خبریں