04:26 pm
اگر مراد سعید اپنی وزارت میں کارگردگی دکھا سکتا ہے تو باقی وزراء کیوں نہیں

اگر مراد سعید اپنی وزارت میں کارگردگی دکھا سکتا ہے تو باقی وزراء کیوں نہیں

04:26 pm

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سینئرصحافی سہیل اقبال بھٹی کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کے امریکا جانے سے قبل ہی کابینہ میں اہم تبدیلیوں کا امکان ظاہر کیا گیا تھا۔عمران خان نے امریکا سے واپس آتے ہی سفارتی محاذ پر تبدیلیاں کر لی جس کے بعد اب سیاسی عہدوں کی باری ہے۔اس سلسلے میں مکمل تیاری کی جا چکی ہے۔وزیراعظم عمران خان کئی وزراء کی کارگردگی سے بلکل میں مطمئن نہیں ہیں جب کہ ان کا کہنا ہے کہ عوام کو جو ریلیف ملنا چاہئیے تھا وہ نہیں مل رہا۔عمران خان کے قریبی ذرائع اس بات کا دعویٰ کرتے ہیں کہ وزیراعظم ایک دو وازرتوں کے علاوہ کسی وزیر کی کارگردگی سے مطمئن نہیں ہیں۔عمران خان کہتے ہیں
کہ اگر مراد سعید پرفارم کر سکتا ہے، وہ اپنے ادارے میں بہتری لا سکتا ہے تو دیگر وزیر کیوں نہیں لا سکتے۔اس لیے عمران خان گذشتہ دنوں انرجی کی وزارت اور گذشتہ دنوں جو آرڈیننس واپس لینا پڑا تو اس پر عمران خان سخت مایوس ہیں۔وہ کہتے ہیں کہ اس سے ہماری حکومت کی ساکھ متاثر ہو رہی ہے۔لہذا وزیراعظم عمران خان نے کابینہ میں بڑی تبدیلی کا فیصلہ کر لیا ہے۔خیال رہے کہ اطلاعات سامنے آ رہی ہیں کہ وفاق میں فردوس عاشق اعوان اور ندیم بابر کو ان کے موجودہ عہدوں سے ہٹا دیا جائے گا۔ ہو سکتا ہے کہ ان کو کوئی اور عہدے دے دئے جائیں یا ہو سکتا ہے کہ کوئی عہدہ نہ ملے۔ اسد عمر کو کابینہ میں واپس لیا جا رہا ہے۔اعجاز شاہ کی جگہ لینے کے دو نام زیر غور ہیں۔ کیونکہ اعجاز شاہ کی طبیعت بھی خاصی خراب ہے اور وہ وزارت کو شاید زیادہ وقت نہیں دے سکتے۔ اِن کی جگہ پرویز خٹک اور شفقت محمود کے نام زیر غور ہیں۔ علی امین گنڈا پور سے متعلق اطلاع ہے کہ ان کی وزارت تبدیل ہو سکتی ہے۔ اعظم سواتی اور زبیدہ جلال کی وزارتیں بھی تبدیلی کی جا سکتی ہے۔