06:16 pm
عالمی کمپنی  کا  سمندری پانی میٹھا کرنے کا لانٹ لگانے میں دلچسپی کا اظہار

عالمی کمپنی کا سمندری پانی میٹھا کرنے کا لانٹ لگانے میں دلچسپی کا اظہار

06:16 pm

کراچی(آن لائن)وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کی زیر صدارت سمند ر کے پانی کو قابل استعمال بنانے سے متعلق اجلاس ہفتہ کے روز وزیراعلیٰ ہاؤس میں ہوا جس میں ایک انٹرنیشنل کمپنی AWDIC کے الیان گاٹسمین، جیسن رائیٹ، اشاک تاؤفین، انامیری کاربیری، کاتیا منشور و دیگر نے شرکت کی جبکہ سندھ حکومت کی طرف سے وزیر بلدیات سید ناصر حسین شاہ، وزیراعلیٰ سندھ کے پرنسپل سیکریٹری ساجد جمال ابڑو، ایم ڈی واٹر بورڈ اسداللہ خان و دیگر متعلقہ افسران بھی موجود تھے۔
اجلاس میں عالمی کمپنی کی سمندری پانی میٹھا کرنے کا لانٹ لگانے میں دلچسپی کا اظہار کرتے ہوئے اپنی بریفنگ میں وزیراعلیٰ سندھ کو بتایا کہ 2025 تک دنیا کی آبادی کا دو تہائی حصہ پانی کی کمی کے مسائل سے دوچار ہوگا جسکو مدنظر رکھتے ہوئے عالمی کمپنی سمندر کے پانی کو میٹھا کرے گی۔ انھوں نے آگاہی دی کہ امریکا میں پانی کی صنعت کی مالیات 250 بلین ڈالر ہے، جب کہ دنیا میں پانی پر سالانہ 2 کھرب ڈالر خرچ ہوتے ہیں۔ کراچی میں پانی کی طلب سال 2025 تک 30 فیصد تک بڑھ جائے گی جبکہ اس وقت کراچی کی آبادی کی طلب 1200 ایم جی ڈی جی ہے اورسپلائی ا?دھی ہے۔ اے ڈبلیو ڈی آئی سی کمپنی نے بریفنگ میں بتایا کہ 1000 گیلن کا ٹینکر 2500 روپے یا 18 ڈالر تک کا ہے۔عالمی کمپنی نے سمندر کے پانی کو میٹھا کرکے شہر کو 265 ایم جی ڈی یومیہ مہیا کرے گی جبکہ پانی کی ڈیسالینیشن شمسی توانائی پر ہوگی اور پلانٹ ایک بڑے شپ پر نصب کیا جائے گا۔ وزیراعلیٰ سندھ نے عالمی کمپنی کو بتایا کہ وہ پانی کے منصوبوں پر کام کررہے ہیں تاکہ شہر کی پانی کی طلب پوری ہوسکے، انھوں نے کمپنی کو اپنا پرپوزل حکومت کو دینے کی تجویز ددیتے ہوئے بتایا کہ مجوزہ منصوبے پر کام ہم پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت بھی کرسکتے ہیں، نیز انھوں نے کمپنی کو پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ یونٹ سے بھی ملاقات کرنے کی ہدایت کی

تازہ ترین خبریں