06:13 pm
کراچی: بیرون ملک سے آنے والے شہریوں کو لوٹنے والے گروہ کاسرغنہ خواجہ سرا نکلا

کراچی: بیرون ملک سے آنے والے شہریوں کو لوٹنے والے گروہ کاسرغنہ خواجہ سرا نکلا

06:13 pm

کراچی(آن لائن)میں بیرون ملک سے آنے والے شہریوں کو لوٹنے والے گروہ کا سرغنہ ایک پیشہ ورخواجہ سرا ہے ، پولیس کی تفتیش کے دوران گرفتار ملزم کے حوالے سے حیرت انگیز انکشاف ہوا ہے ،گرفتار ملزمان کئی سالوں سے بیرون ممالک سے وطن واپس آنے والے شہریوں کو پولیس اہلکار بن کر لوٹتے تھے ۔ ملزمان سال 2016 سے اب تک مختلف تھانوں کی پولیس کے ہاتھوں کئی مرتبہ گرفتار ہوچکے ہیں
۔پولیس کے مطابق ملزم ناصر عرف تے تے، اس کا بھائی احمد اور بھتیجا عارف گذشتہ دنوں کراچی پولیس کے خصوصی یونٹ کے ہاتھوں گرفتار ہوئے۔گلستان جوہر کا رہائشی یہ ڈکیت خاندان بیرون ملک سے واپس آنے والے شہریوں کو کراچی ایئرپورٹ سے نکلتے ہی چیکنگ کے بہانے لوٹ لیتا تھا۔ اس شاطر گروہ کو پولیس کی نیلی اور سرخ بتی لگی گاڑی سے ٹارگٹ کو اوورٹیک کرکے روکنا اور پولیس کی وردی سے ملتی جلتی ڈریسنگ میں پولیس اہلکار ہونے کا تاثر دے کر چیکنگ کے دوران شہریوں پر ہاتھ صاف کرنے کا ماہر سمجھا جاتا ہے۔پولیس حکام کے مطابق دوران تفتیش ملزمان سے ان کے پیشے سے متعلق سوال کیا تو ناصر عرف تے تے نے خود کو ڈکیت لکھوایا۔ماضی کریدنے پر ملزم نے خود کو سابقہ پیشہ ور خواجہ سرا ظاہر کیا، تفتیشی افسران نے ثبوت مانگا تو ملزم نے عربی گانے پر ایسیڈانس کیا کہ تفتیشی افسران داد دینے پر مجبور ہوئے۔پولیس حکام کے مطابق ملزمان اس قدر بے حس ہیں کہ حاجیوں اور عمرہ زائرین کو بھی نہیں چھوڑتے۔ گروہ نے رہزنی کی بیشتر وارداتیں حج اور عمرہ سے واپس آنے والوں سے کیں۔ ملزمان سے برآمد سامان میں آب زم زم، کھجوریں، جائے نماز اور تسبیاں بھی ہیں۔تے تے کا گروہ سال 2016 اور 2017 میں ائیرپورٹ پولیس کے ہاتھوں گرفتار ہوا لیکن رہا ہونے کے بعد وارداتوں کیلئے علاقہ بدل لیا۔ سال 2018 میں شاہراہ فیصل پولیس کے ہاتھوں پکڑے کئے گئے تو راشد منہاس روڈ کو وارداتوں کیلئے چن لیا۔ ان ملزمان کو سی ٹی ڈی نے بھی گرفتار کیا پھر اورنگی ٹاؤن اور تیموریہ میں بھی وارداتوں میں پکڑے گئے۔پولیس حکام کا کہنا ہے کہ حالیہ گرفتاری سے محض ڈھائی ماہ قبل تمام ملزمان جیل سے رہا ہوئے۔ کرایہ کی گاڑی لی، اس پر پولیس ہوٹر، نیلی اور لال بتی لگائی اور پولیس کا گیٹ اپ بنا کر پھر وارداتیں کرنے لگے۔پولیس کے مطابق یہ ملزمان ایک بار پھر جیل میں ہیں اور ان کے پس پردہ نیٹ ورک ان کی رہائی کیلئے سرگرداں ہے۔

تازہ ترین خبریں