05:36 pm
پی آئی سی پر حملہ کرنے والے وکلاءکے خلاف کریک ڈاؤن شروع‘لاہور بار کے صدر سمیت 15اہم گرفتاریاں

پی آئی سی پر حملہ کرنے والے وکلاءکے خلاف کریک ڈاؤن شروع‘لاہور بار کے صدر سمیت 15اہم گرفتاریاں

05:36 pm

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک ) پنجاب پولیس نے انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی پر دھاوا بولنے والے وکلا کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کردیا ہے اور اطلاعات کے مطابق پولیس نے لاہور بار ایسوسی ایشن کے صدر عاصم چیمہ سمیت 15وکلاءکو گرفتار کرلیا ہے. دوسری جانب پنجاب بارکونسل نے وکلا کی گرفتاریوں کے کل کل صوبے بھرمیں ہڑتال کااعلان کردیا۔ پنجاب بار کی جانب سے جاری اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ صوبے بھر میں وکلا عدالتوں کا بائیکاٹ کریں گے
اور احتجاجی ریلیاں نکالی جائیں گی. واضح رہے کہ آج پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی میں وکلا نے ہنگامہ آرائی کر کے ہسپتال کے اندر اور باہر توڑ پھوڑ کی جس کے باعث طبی امداد نہ ملنے سے 8 مریض جاں بحق اور متعدد افراد زخمی ہوگئے ‘گرینڈ ہیلتھ الائنس کے چیئرمین ڈاکٹر سلمان حسیب کے مطابق اس پرتشدد مظاہرے کے دوران8 مریض اپنی زندگی کی بازی ہار گئے، رپورٹس کے مطابق کئی مریض تشویش ناک حالت میں تھے اور وکلا کی جانب سے ایمرجنسی وارڈز میں گھسنے کے بعد انہیں طبی امداد نہ مل سکی کئی مریضوں کے لواحقین نے الزام عائد کیا کہ حملہ آور وکلاءنے مریضوں کو لگے آکسیجن ماسک بھی اتارپھینکے جبکہ آپریشن تھیڑاور آئی سی یو کو بھی نشانہ بنایا گیا. واضح رہے کہ مذکورہ معاملہ اس وقت شروع ہوا جب وکلا نے الزام عائد کیا کہ وائرل ہونے والی ایک ویڈیو میں ینگ ڈاکٹرز وکلا کا مذاق اڑا رہے تھے جس پر انہوں نے سوشل میڈیا پر مہم چلائی‘تاہم ڈاکٹر کے مطابق وکلا کا ایک گروپ انسپکٹر جنرل کے پاس گیا تھا اور انہیں کہا تھا کہ دو ڈاکٹرزکے خلاف اے ٹی اے کی دفعہ 7 کے تحت مقدمہ درج کیا گیا، تاہم ان کا کہنا ہے کہ آئی جی نے اس معاملے پرمددکرنے سے انکار کردیا. بعد ازاں آج وکلا کی بڑی تعداد مبینہ ویڈیو کے خلاف مظاہرہ کرنے کے لیے پی آئی سی کے باہر جمع ہوئی، تاہم یہ احتجاج پرتشدد ہوگیا اور وکلا نے پہلے ہسپتال کے داخلی و خارجی راستے بند کردیے. وکلاءہسپتال کے گیٹ توڑتے ہوئے ہسپتال میں داخل ہوگئے، وکلا نے نہ صرف ہسپتال پر پتھر برسائے بلکہ ہسپتال کی ایمرجنسی کے شیشے توڑے اس کے ساتھ ڈنڈوں اور لاتوں سے باہر کھڑی گاڑیوں کو توڑ پھوڑ کا نشانہ بنایا‘ہنگامہ آرائی کے باعث کئی مریض ہسپتال نہیں پہنچ سکے جبکہ ہسپتال میں زیر علاج مریضوں کے ساتھ ڈاکٹروں کو دکھانے کے لیے آنے والے مریضوں اور ان کے اہلِ خانہ کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا اور کئی کو تشددکا نشانہ بنایا گیا. وکلا کی جانب سے ہسپتال کے آئی سی یو، سی سی یو اور آپریشن تھیٹر کی جانب بھی پیش قدمی کی گئی جبکہ ہسپتال کے کچھ عملے کی جانب سے بھی وکلا پر تشدد کیا گیا‘ہسپتال پر دھاوے، توڑ پھوڑ کے باعث اپنی جان بچانے لیے عملہ فوری طور پر باہر نکل گیا. یہی نہیں بلکہ مشتعل وکلا نے میڈیا کے نمائندوں پر بھی پتھراؤ کیا جس سے نجی ٹی وی کی خاتون رپورٹر زخمی ہوگئیں جبکہ ان کا موبائل بھی چھین لیا گیا بگڑتی صورتحال کے پیش نظر پولیس کی اضافی نفری موقع پر پہنچی اور حالات پر قابو پانے کی کوشش کی، تاہم اس دوران مشتعل افراد نے ایک پولیس موبائل کو بھی آگ لگادی. پولیس نے مشتعل وکلا کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس کا استعمال کیا اور لاٹھی چارج بھی کیا پولیس نے کچھ وکلا کی کو گرفتار کرلیا، جس پر وکلا نے سول سیکریٹریٹ کے اطراف کی سڑک کو بند کردیا جائے وقوع پر صورتحال کے پیش نظر پنجاب کی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد بھی پی آئی سی پہنچی جبکہ ڈی آئی جی آپریشن ہسپتال پہنچے. ڈی آئی جی آپریشن کا کہنا تھا کہ جن لوگوں نے قانون کو ہاتھ میں لیا ان سے سختی سے نمٹا جائے گاعلاوہ ازیں مذکورہ واقعے کے بعد لاہور ہائی کورٹ بار کے صدر اور سیکریٹری پی آئی سی ہسپتال پہنچے اور وکلا کے ساتھ مذاکرات کرنے کی کوشش کی.یہ معاملہ اس وقت شروع ہوا جب چند روز قبل کچھ وکلا پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیولوجی میں ایک وکیل کی والدہ کے ٹیسٹ کے لیے گئے، جہاں مبینہ طور پر قطار میں کھڑے ہونے پر وکلا کی جانب سے اعتراض کیا گیااسی دوران وکلا اور ہسپتال کے عملے دوران تلخ کلامی ہوئی اور معاملہ ہاتھا پائی تک پہنچ گیا اور مبینہ طور پر وہاں موجود وکلا پر تشدد کیا گیا.مذکورہ واقعے کے بعد دونوں فریقین یعنی وکلا اور ڈاکٹرز کی جانب سے احتجاج کیا گیا اور ایک دوسرے پر مقدمات درج کرنے کا مطالبہ کیا گیا، تاہم بعد ازاں ڈاکٹرز کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا‘اس مقدمے کے اندراج کے بعد وکلا کی جانب سے کہا گیا کہ ایف آئی آر میں انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعات شامل کریں، تاہم پہلے ان دفعات کو شامل کیا گیا بعد ازاں انہیں ختم کردیا گیا جس کے بعد ینگ ڈاکٹرز کی جانب سے ایک پریس کانفرنس میں مذکورہ واقعے پر معافی مانگ لی گئی اور معاملہ تھم گیا. تاہم گزشتہ روز ینگ ڈاکٹرز کی ایک ویڈیو وائر ہوئی جس میں ڈاکٹر اس واقعے کا ذکر کرتے ہوئے دیکھا گیا اور مبینہ طور پر وکلا کا مذاق اڑایا گیا تھا، جس پر وکلا نے سوشل میڈیا پر ڈاکٹر کے خلاف ایک مہم شروع کردی. اس معاملے پر بدھ کو ایوان عدل میں لاہور بار ایسوسی ایشن کا اجلاس عاصم چیمہ کی سربراہی میں ہوا جس میں مزید کارروائی کے لیے معاملے کو جمعرات تک ملتوی کردیا گیا، تاہم کچھ وکلا نے بدھ کو ہی ڈاکٹرز کے خلاف کارروائی کرنے کے لیے پی آئی سی کا رخ کیا‘پی آئی سی پر دھاوے کے دوران پنجاب کے وزیراطلاعات فیاض الحسن چوہان بھی ہسپتال پہنچے، تاہم ان پر بھی مشتعل افراد جو بظاہر وکلا نظر آرہے تھے انہوں نے تشدد کیا.مذکورہ معاملے کی ایک ویڈیو سامنے آئی، جس میں فیاض الحسن چوہان پر تشدد اور انہیں بالوں سے پکڑتے ہوئے دیکھا گیا‘اس حوالے سے صوبائی وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ وکلا نے انہیں اغوا کرنے کی کوشش کی انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ پنجاب نے کہا ہے کہ جنہوں نے ظلم کیا ہے انہیں معاف نہیں کیا جائے گا اور ان کے خلاف تادیبی کارروائی ہوگی اور انہیں نشان عبرت بنایا جائے گا. واقع پر ردعمل میں مشیر اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے لکھا کہ لاقانونیت کو کسی صورت برداشت نہیں کیا جاسکتا، قانون کی وردی پہننے والوں کو قانون کی پاسداری کرنا ہوگی‘ادھر پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیولوجی کی بگڑتی صورتحال پر وزیراعظم عمران خان نے بھی نوٹس لے لیا وزیراعظم عمران خان نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے چیف سیکریٹری پنجاب اور آئی جی پنجاب سے رپورٹ طلب کرلی. وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار جو واقعے کے وقت اسلام آباد میں تھے، انہوں نے بھی پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی میں وکلا کی جانب سے ہنگامہ آرائی کے واقعہ کا سخت نوٹس لے لیا‘انہوں نے سی سی پی او لاہور اور صوبائی سیکرٹری سپشلائزڈ ہیلتھ اینڈ میڈیکل ایجوکیشن سے تفصیلی رپورٹ طلب کرلی وزیراعلیٰ نے واقعہ کی تحقیقات کا حکم دیتے ہوئے ہنگامہ آرائی کے ذمہ داروں کے خلاف قانون کے تحت کارروائی عمل میں لانے کی ہدایت کی وزیراعلیٰ عثمان بزدار کا کہنا تھا کہ کوئی قانون سے بالا تر نہیں امراض قلب کے ہسپتال میں ایسا واقعہ ناقابل برداشت ہے انہوں نے کہا کہ مریضوں کے علاج معالجے میں رکاوٹ ڈالنا غیر انسانی اور مجرمانہ اقدام ہے، پنجاب حکومت ذمہ داروں کے خلاف سخت قانونی کارروائی کرے گی. دوسری جانب ینگ کنسلٹنٹ ایسوسی ایشن (وائی سی اے) نے اس پرتشدد مظاہرے کے بعد ملک گیر ہڑتال کا اعلان کردیا گیا وائی سی اے کے صدر ڈاکٹر حمید بٹ نے کہا کہ کل (جمعرات) کو پنجاب بھر میں کوئی کنسلٹنٹ ڈیوٹی پر نہیں جائے گا، ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ وکلا کی جانب سے توڑ پھوڑ قابل مذمت ہے. لاہور میں پیش آنے والے واقعے پر سینئر وکیل اور پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما اعتزاز احسن نے کہا کہ آج کا واقعہ انتہائی شرمناک ہے، آج کے واقعے سے میرا سر شرم سے جھک گیا انہوں نے کہا کہ لاہور میں 30 ہزار وکلا ہیں، لاہور بار ایسوسی ایشن کے ممبران ہی کوئی 25 ہزار ہے لیکن یہ کام کوئی 200 سے 300 وکلا نے کیا ہے، جس میں سے بھی زیادہ تر جنوری میں آنے والے انتخابات کے امیدوار ہوں گے. انہوں نے کہا کہ جس قسم کا واقعہ آج کیا گیا وہ بہت ہی شرمناک ہے، اس کی جتنی مذمت کی جائے وہ کم ہے جبکہ جو بھی پرتشدد کارروائی میں نظر آتا ہے اسے انتخابات میں حصہ نہیں لینے دینا چاہیے. اعتزاز احسن نے کہا کہ اس واقعے سے دیگر وکیلوں کی عزت خراب ہوئی، میرا اس شعبے سے 50 سال سے زائد تعلق رہا ہے لیکن آج میرا سر شرم سے جھک گیا کہ ہم کالے کوٹ کی کیا عزت بنا رہے ہیں‘ انہوں نے کہا کہ یہ سب ایک ہسپتال پر کیا گیا، کالے کوٹ والوں نے شیشے توڑے، سرجیکل وارڈ میں داخل ہوگئے تاہم اس طرح کا کام بالکل نہیں ہونا چاہیے تھا انہوں نے کہا کہ میری یہ رائے ہوگی کہ جن وکلا نے یہ سب کیا ہے انہیں انتخاب میں ووٹ نہیں دینا چاہیے. پاکستان بار کونسل کے نائب چیئرمین سید امجد شاہ نے نجی ٹی وی چینل سے گفتگو میں ہنگامہ آرائی کی مذمت کی اور کہا کہ یہ چند وکلا کا انفرادی عمل تھا انہوں نے کہا کہ پہلے ڈاکٹرز نے بدتمیزی کی جس کے بعد وکلا مشتعل ہوئے، تاہم ہم کسی طرح کے تشدد کی حمایت نہیں کرتے انہوں نے کہا کہ پنجاب بار کونسل کے چیئرمین کے چیئرمین کی سربراہی میں واقعے کی تحقیقات کے لیے کمیٹی قائم کردی گئی.

تازہ ترین خبریں

مسلم لیگ (ن)کی جانب سے لاہور جلسے میں لوگوں کو بلانے کےلئے پیسے بانٹنے کا انکشاف

مسلم لیگ (ن)کی جانب سے لاہور جلسے میں لوگوں کو بلانے کےلئے پیسے بانٹنے کا انکشاف

اپوزیشن اتحاد ، پی ڈی ایم سے حکومت کے مذاکرات ۔۔ ناقابل یقین اعلان کردیاگیا

اپوزیشن اتحاد ، پی ڈی ایم سے حکومت کے مذاکرات ۔۔ ناقابل یقین اعلان کردیاگیا

بوائے فرینڈ پر جھگڑا: لاہور کی یونیورسٹی کی تین طالبات آپس میں لڑپڑیں

بوائے فرینڈ پر جھگڑا: لاہور کی یونیورسٹی کی تین طالبات آپس میں لڑپڑیں

ایل این جی درآمد میں تاخیر،قومی خزانے کو 122ارب کا نقصان

ایل این جی درآمد میں تاخیر،قومی خزانے کو 122ارب کا نقصان

 اپوزیشن کورونا پھیلاؤ مہم چلارہی ہے اورعوام کی زندگیوں سےکھیل رہی ہے، مراد سعید

اپوزیشن کورونا پھیلاؤ مہم چلارہی ہے اورعوام کی زندگیوں سےکھیل رہی ہے، مراد سعید

پاکستانی ڈاکٹر زجلاد بن گئے ! دوران آپریشن کورونا رپورٹ مثبت آنے پر آپریشن بیچ میں چھوڑ دیا

پاکستانی ڈاکٹر زجلاد بن گئے ! دوران آپریشن کورونا رپورٹ مثبت آنے پر آپریشن بیچ میں چھوڑ دیا

وزیراعظم عمران خان آج شب اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کریں گے

وزیراعظم عمران خان آج شب اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کریں گے

گندا ہے پر دھندا ہے ۔۔۔ صرف 16ہزار روپے لگا کر سال کے کروڑوں روپے کمائیں  تہلکہ مچادینےوالی خبر

گندا ہے پر دھندا ہے ۔۔۔ صرف 16ہزار روپے لگا کر سال کے کروڑوں روپے کمائیں تہلکہ مچادینےوالی خبر

مولانا کو بلوچستان میں مخلوط حکومت اور دو وزارتوں کی پیشکش

مولانا کو بلوچستان میں مخلوط حکومت اور دو وزارتوں کی پیشکش

پاکستان میں کویت کے سفیر نصر المطہری کی وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی سے ملاقات

پاکستان میں کویت کے سفیر نصر المطہری کی وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی سے ملاقات

امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے بھی ان ہائوس تبدیلی کی حمایت کرڈالی

امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے بھی ان ہائوس تبدیلی کی حمایت کرڈالی

معذور افراد ہمارے معاشرے کا اہم حصہ ہیں،وفاقی وزیر آئی ٹی امین الحق

معذور افراد ہمارے معاشرے کا اہم حصہ ہیں،وفاقی وزیر آئی ٹی امین الحق

مسلم لیگ (ن) اپوزیشن میں ہے اس لئے اپنے کارکنوں کو لوٹ رہی ہے، مریم نواز

مسلم لیگ (ن) اپوزیشن میں ہے اس لئے اپنے کارکنوں کو لوٹ رہی ہے، مریم نواز

سب مانتے ہیں مہنگائی ہے وزیراعظم خود بھی مانتے ہیں ، عثمان ڈار

سب مانتے ہیں مہنگائی ہے وزیراعظم خود بھی مانتے ہیں ، عثمان ڈار