01:43 pm
بچے کی ولادت پر خاتون ملازم کو 6ماہ کی اور شوہر کو1ماہ کی چھٹی

بچے کی ولادت پر خاتون ملازم کو 6ماہ کی اور شوہر کو1ماہ کی چھٹی

01:43 pm

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) سینیٹ کی کمیٹی برائے خزانہ نے سرکاری اور نجی اداروں کے ملازمین کے لئے "زچگی اور پیٹرنٹی لیو بل 2019" کو متفقہ طور پر منظور کرلیا ہے۔سینیٹ کمیٹی برائے خزانہ کا اجلاس پارلیمنٹ ہاؤس میں سینیٹر فاروق ایچ نائک کی زیر صدارت ہوا۔
اجلاس کے دوران سینیٹر قراۃ العین مری کی جانب سے بل پیش کیا ۔ جس کو قائمہ کمیٹی کے تمام ممبران نے متفقہ طور پر منظور کرلیا ہے ۔اس بل کی منظوری کے بعد خاتون ملازمین کو اپنے پہلے بچے کی پیدائش کے بعد 180 دن کیلئے تنخواہ کیساتھ چھٹی مل سکے گی ۔ جبکہ چھٹیوں کی تعداد دوسرے اور تیسرے بچے پر بالترتیب 120 اور 90 دن رہ جائیں گی۔منظور شدہ بل میں بیوی کے حاملہ ہونے پر شوہر کو ایک ماہ کی چھٹی ملے گی تاہم یاد رہےچند روز قبل سینیٹ کمیٹی برائے خزانہ نےسفارشات پیش کی تھی کہ بچے کی پیدائش پر والدہ کے ساتھ والد کو بھی چھٹی ملے گی ۔سینیٹ قائمہ کمیٹی خزانہ نے میٹرنٹی اور پیٹرنٹی بل کی منظوری دے دی تھی ۔چئیرمین ایف بی آر شبر زیدی نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا تھا کہ ٹیکس ریٹرن کے لے روایتی طریقہ ختم کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔ اجلاس میں میٹرنٹی اور پیٹرنٹی بل کی منظوری دے دی گئی تھی جس کے بعد اب بچے کی پیدائش پر والدہ کے ساتھ والد کو بھی چھٹی ملے گی۔ پیدائش کے ابتدائی دونوں میں اسے نظر انداز کرتے ہیں۔اس وقت ماں کو مدد کی ضرورت ہوتی ہے۔اور وہی وقت ہوتا ہے جب والد کا اپنے بچے سے تعلق مضبوط ہوتا ہے۔پیش کیے گئے مسودہ کے مطابق زچگی کے لیے چھٹی مانگنے پر میاں بیوی میں سے کسی کو بھی نوکری سے نہیں نکالا جا سکے گا۔ضرورٹ پڑنے پر ماں کی چھٹی میں تین ماہ اور باپ کی رخصت میں ایک ماہ کی توسیع ہو سکے گی تاہم ان اضافی چھٹیوں کی تنخواہ نہیں ملے گی۔ تاہم آج سینیٹ کی قائمہ کیمیٹی کے اجلاس میں خاتون ملازم کیلئے بچے کی پیدائش کو 180دن کی چھٹی دینے کا بل پاس کر لیا ہے۔

تازہ ترین خبریں