05:55 am
200 بچوں کیساتھ زیادتی ، سفاک مجرم کو قیدیوں نے جیل میں ہی قتل کردیا

200 بچوں کیساتھ زیادتی ، سفاک مجرم کو قیدیوں نے جیل میں ہی قتل کردیا

05:55 am

لندن (نیوز ڈیسک ) بچوں کے خلاف جرائم کے حوالے سے برطانوی تاریخ کے سب سے سفاک مجرم کو قیدیوں نے جیل میں ہی قتل کردیا۔ قیدیوں نے سفاک مجرم کے منہ میں کنڈوم ٹھونسے اور گٹار کی تار سے اس کا گلا گھونٹ دیا۔برطانوی اخبار دی سن کے مطابق رچرڈ ہکل نامی سفاک مجرم کو 2014 میں گیٹ وک ایئر پورٹ سے اس وقت گرفتار کیا گیا تھا جب وہ آسٹریلیا میں کرسمس کی چھٹیاں گزار کر واپس آرہا تھا۔ جس وقت اسے گرفتار کیا گیا اس وقت وہ بچوں
کے ساتھ جنسی زیادتی کے عادی افراد کیلئے ایک کتاب لکھ رہا تھا جس میں انہیں بچوں کے ساتھ زیادتی اور پولیس سے بچنے کے طریقے بتائے گئے تھے۔نیشنل کرائم ایجنسی نے مجرم کے لیپ ٹاپ سے بچوں کی 20 ہزار نازیبا تصاویر اور ویڈیوز برآمد کی تھیں۔تحقیقات کے دوران انکشاف ہوا کہ مجرم نے 6 ماہ سے 12 سال تک کے بچوں کو اپنا نشانہ بنایا اور ان کے ساتھ زیادتی کی تصاویر اور ویڈیوز ڈارک ویب پر فروخت کیں۔ مجرم کا نظریہ تھا کہ ملائیشیامیں بچوں کو آسانی سے شکار کیا جاسکتا ہے کیونکہ وہاں مغربی ممالک جتنا شعور نہیں ہے، عدالت نے اس سفاک مجرم کو 22 بار عمر قید کی سزا سنائی تھی۔پولیس کا کہنا ہے کہ مجرم رچرڈ ہکل کو 13 اکتوبر 2019 کو جیل میں ساتھی قیدیوں نے قتل کردیا تھا۔ اس کے قتل کے الزام میں 29 سالہ ایک شخص کو گرفتار کیا گیا ہے۔ پولیس نے مجرم کے قتل کی واردات کی تفصیلات اب جاری کی ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ قیدیوں نے رچرڈہکل کے منہ میں کنڈوم ٹھونس کر گٹار کی تار سے اس کا گلا گھونٹا اور تیز دھار آلے کے وار کرکے قتل کیا ، پولیس نے اس حوالے سے مزید تفصیلات جاری نہیں کی ہیں۔

تازہ ترین خبریں