08:46 am
کورونا وائرس کیا ہے اوراس سے کیسے بچاجاسکتا ہے

کورونا وائرس کیا ہے اوراس سے کیسے بچاجاسکتا ہے

08:46 am

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) کرونا وائرس سے مختلف ممالک میں ہونے والی سیکڑوں ہلاکتوں کے بعد دُنیا بھر میں احتیاطی تدابیر اختیار کی جا رہی ہیں۔ چین کے وسطی شہر ووہان سے شروع ہونے والا یہ وائرس پاکستان سمیت دُنیا کے مختلف ملکوں تک پھیل چکا ہے۔ماہرین صحت اس وائرس کی بنیاد بننے والے عناصر کا جائزہ لینے کے لیے سرگرم عمل ہیں۔ماہرین صحت کے مطابق نئے وائرس کو نویل کرونا وائرس 2019 کا نام دیا گیا ہے۔ اس کے علاج کے لیے کوئی دوا موجود نہیں۔ یہ وائرس تیزی سے ایک شخص سے دوسرے میں منتقل ہو رہا ہے۔ عالمی ادارہ صحت نے دُنیا بھر میں اس وائرس سے بچنے کے لیے وارننگ جاری کر دی ہے
۔پاکستان میں کرونا وائرس کیسز رپورٹ ہونے کے بعد لوگ تشویش میں مبتلا، وہ چند احتیاطی تدابیر جنہیں اختیار کر کے اس خطرناک وائرس سے بچا جا سکتا ہے،مگر کیسے ؟ اس سوال کا جواب دریافت کرنا پوری دنیا سمیت تمام پاکستانیوں کے لئے بہت ضروری ہو چکا ہے۔ اس سوال کا جواب دریافت کرتے ماہرین کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس سے بچنے کے لئے دو چیزوں کو فوکس کرنا بہت ضروری ہے ۔ہاتھ دھوتے رہیں اور ماسک لگائے رکھیں ۔ چین میں مقیم پاکستان ڈاکٹر سلیم کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس کا سائز بہت بڑا ہو تاہے ،۔ اس کا خلیہ 400 سے 500نینو میٹر کا ہوتا ہے۔ اس وائرس کو ناک یا منہ میں داخل ہونے سے روکنا بہت آسان ہے جس کی وجہ اس کا بڑا سائز ہے۔ کرونا وائر س ہوا میں نہیں رہتا ، زمین پر گرتا ہے۔تاہم جب چھینک ماری جاتی ہے تو یہ وائرس تین کلومیٹر تک سفر کرتا ہے ۔ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر یہ وائس کسی دھات کے ساتھ لگ جائے تو 6 سے 12 گھنٹے تک زندہ رہتا ہے۔ اس لئے آپ جب بھی کسی دھات کو ہاتھ لگائیں تو اپنے ہاتھوں کو اچھی طرح دھو لیں۔ اگر یہ وائرس کسی کپڑے پر گر جائیں تو ان کی زندگی12 گھنٹے تک ہوتی ہے اس لئے ضروری ہے کہ کپڑوں کو بھی اچھی طرح دھویا جائے۔ کپڑوں کو روز روز دھونا بھی ممکن نہیں ہے اس لئے ان کپڑوں کو دھوپ میں رکھا جائے جس سے وائرس کا خاتمہ ہو جائے گا۔ڈاکٹر سلیم کا کہنا ہے کہ وائرس اگر آپ کے ہاتھ کو لگ جائے اس کی زندگی 10 منٹ تک ہو تی ہے۔ اگر آپ نے انہیں ہاتھوں کو اپنی آنکھ یا منہ پر لگایا تو خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔ ماہرین کی جانب سے مشورہ دیا گیا ہے کہ اپنی جیب میں ہینڈ سینیٹائزر رکھیں اور اپنے ہاتھوں کو صاف رکھنے کے لئے اس کا استعمال کرتے رہیں۔گرم پانی کے استعمال کے حوالے سے ماہرین نے موقف اختیار کیا ہے کہ گرم پانی کرونا وائرس کو ختم نہیں کرتا ، اسے معدے میں دھکیل دیتا ہے جس سے کرونا وائرس ہلاک ہو جا تاہے ۔تاہم اپنا پانی کسی کے ساتھ شیئر نہ کریں۔ شہریوں کو احتیاطََ پانی کی بوتل اپنے پاس رکھنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ حلق کو خشک مت ہونے دیں۔ مشروبات کے قریب بھی نہ جائیں، عوامی مقامات سے بھی دور رہا جائے۔دھوپ میں بیٹھنے کی عادت ڈال لیں، ہاتھ دھونے کے ساتھ ساتھ غرارے کرنے میں زیادہ بہتری ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے سب سے پہلے یہ بات ذہن میں رکھنے کی ضرورت ہے کہ کرونا وائرس جانور سے انسان اور انسان سے انسان میں منتقل ہونے کی صلاحیت رکھتا ہے، اور نزلے کی صورت میں ظاہر ہوتا ہے۔ یہ بیماری چھینکنے یا کھانسی کرنے سے پھیل سکتی ہے۔ جس کی وجہ بلغم یا تھوک کا منہ سے باہر نکلنا ہے۔سائنس دانوں کے مطابق کھانسی اور چھینک کئی فٹ تک کا سفر کرنے کے ساتھ ساتھ 10 منٹ تک ہوا میں رہ سکتی ہے۔ جس سے دوسرے لوگ بھی متاثر ہوسکتے ہیں۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ لوگ چند احتیاطی تدابیر اختیار کر کے کرونا وائرس سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔ متواتر ہاتھ دھو کر، گرم پانی سے نہا کر اور منہ پر ماسک پہنے رکھنے سے کرونا وائرس کا شکار ہونے سے بچا جا سکتا ہے۔

تازہ ترین خبریں