06:44 am
ایف اے ٹی ایف گرےلسٹ سے نہ نکالے جانے کے بعد پاکستانی معیشت کیلئے بُری خبر

ایف اے ٹی ایف گرےلسٹ سے نہ نکالے جانے کے بعد پاکستانی معیشت کیلئے بُری خبر

06:44 am

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نہ نکالے جانے کے بعد پاکستانی معیشت کیلئے بری خبر، عالمی ریٹنگ ایجنسی موڈیز نے جاری کردہ رپورٹ میں فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے فیصلے کو پاکستانی بینکوں کیلئے منفی پیش رفت قرار دے دیا۔ تفصیلات کے مطابق ایف اے ٹی ایف کی جانب سے پاکستان کو گرے لسٹ میں برقرار رکھنے کے فیصلے کے بعد عالمی ریٹنگز ایجنسی موڈیز کی جانب سے پاکستان کیلئے خصوصی رپورٹ جاری کی گئی ہے۔موڈیز
کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ کے مطابق پاکستان کا ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں برقرار رہنا پاکستانی بینکوں کے لیے ایک منفی خبر ہے۔ موڈیز کی رپورٹ کے مطابق پاکستان کی کارکردگی میں گزشتہ سالوں کی نسبت قدرے بہتری دیکھنے میں آئی ہے۔پاکستان کی جانب سے ایف اے ٹی ایف کی جانب سے دئیے گئے 27 ٹاسکس میں سے 14 پر عملدرآمد کیا گیا ہے۔ تاہم اس کے باوجود ایف اے ٹی ایف حکام سمجھتے ہیں کہ پاکستان کو مزید کام کرنے کی ضرورت ہے، اسی لیے اس کا نام گرے لسٹ میں برقرار رکھا گیا ہے۔لیکن اس تمام صورتحال میں پاکستان کے اسٹیٹ بینک کو یقین ہے کہ جون 2020 تک پاکستان گرے لسٹ سے نکل وائٹ لسٹ میں آ جائے گا۔ یہاں واضح رہے کہ ایف اے ٹی ایف کی جانب سے پاکستان کو منی لانڈرنگ اور ٹیرر فنانسنگ کےخلاف موثر اقدامات کرنے کیلئے جون 2020 تک کا مزید وقت دیا گیا ہے۔ پاکستان کو ہدایت کی گئی ہے کہ جون 2018 تک مزید اقدامات کر کے ایف اے ٹی ایف کے اعتماد میں اضافہ کیا جائے، جس کے بعد اس کا نام گرے لسٹ سے نکال دیا جائے گا۔پاکستان کو ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے چین، ترکی، ملائیشیا اور دیگر کئی ممالک کی حمایت بھی حاصل ہے۔ اس لیے قوی امکان ہے کہ پاکستان رواں برس کے وسط تک ایف اے ٹی ایف گرے لسٹ سے نکل کر وائٹ لسٹ میں آ جائے گا۔