11:49 am
کوروناوائرس ہر سال آئے گا، زرتاج گل

کوروناوائرس ہر سال آئے گا، زرتاج گل

11:49 am

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) شاپنگ مرکز میں آنے والی وفاقی وزیر زرتاج گل کا کہنا ہے کہ یہ دیکھ کر خوشی ہو رہی ہے کہ لوگ احتیاطی تدابیر اپنا رہے ہیں۔لیکن ماسک پہننا صرف ان لوگوں کے لیے ضروری ہے جو کورونا وائرس کا شکار ہیں۔زرتاج گل مزید کہتی ہیں کہ میں بھی اپنے حلقے سے واپس آ گئی ہوں کیونکہ میرے موجودگی میں وہاں لوگ اکٹھے ہو جاتے ہیں جو کہ کورونا وائرس کے پیش نظر خطرناک بتایا جاتا ہے۔
انڈیپنڈنٹ اردو سے گفتگو کرتے ہوئے زرتاج گل کا کہنا ہے کہ مشکل وقت ہے لیکن کورونا وائرس کا ایک ہی علاج ہے کہ آپ فاصلہ رکھیں،ہاتھ نہ ملائیں اور احتیاط کریں۔انہوں نے مزید کہا کہ میں ڈاکٹر یا ماہر نہیں ہوں لیکن بتایا گیا ہے کہ کورونا وائرس 12 گھنٹے تک سطح پر پڑا رہتا ہے اور موسم گرما میں ختم ہو جاتا ہے۔وفاقی وزیربرائے موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل نے ایک حیران کن بیان دیتے ہوئے کہا کہ کورونا وائرس ہر سال آئے گا۔جیسے ڈینگی ہر سال آتا ہے ایسے ہی کورونا وائرس ہر سال آئے گا،ہم یہ نہیں کہہ سکتے کہ کورونا وائرس دنیا سے ختم ہو جائے گا۔یہ پہلی پر دنیا پر نمودار ہوا ہے اور تاحال اس کا علاج دریافت نہیں ہوا۔۔دوسری جانب کچھ لوگوں کی جانب سے ززرتاج گل کے بیان پر حیرانگی کا بھی اظہار کیا گیا ہے کیونکہ پہلی بار کسی وزیر کی طرف سے ایسا بیان آیا ہے کہ کورونا وائرس ہر سال آئے گا۔ایک اور بیان میں وزیر مملکت برائے موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل نے کہا ہے کہ کورونا سے ڈرنا نہیں لڑنا ہے، پوری دنیا میں یہ وباء پھیلی ہوئی ہے، احتیاط سے میں اور آپ اس سے بچ سکتے ہیں۔جمعرات کو جاری ویڈیو پیغام میں انہوں نے کہا کہ کورونا سے ڈرنا نہیں لڑنا ہے، پوری دنیا میں یہ وباء پھیلی ہوئی ہے لیکن احتیاط سے میں اور آپ بچ سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صفائی نصف ایمان ہے، اپنے ہاتھوں کو دھونا ہے، پبلک مقامات پر جانے سے گریز کرنا ہے اور ایک دوسرے ملنا جلنا فی الحال ترک کر دیں، ہم اس وباء پر انشاء الله قابو پا لیں گے۔واضح رہے کہ پاکستان میں کوروناوائرس کےمریضوں کی مجموعی تعداد 461 ہوگئی ہے جب کہ تین افراد ہلاک بھی ہوئے ہیں۔سندھ میں سب سے زیادہ 245 افراد متاثر ہوئے ہیں۔ بلوچستان دوسرے اور پنجاب تیسرے نمبر پر ہے، بلوچستان 81 اورپنجاب میں 80 کیسز سامنے آئے ہیں۔گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر میں چوبیس، خیبرپختون خوا میں اڑتیس افراد متاثر اور اسلام آباد میں کورونا کے آٹھ مریض سامنے آئے۔ پاکستان میں کورونا کے تین مریض ہلاک ہوئے جب کہ چند صحت یاب بھی ہیں۔پنجاب نے سندھ جانے والی تمام ٹرانسپورٹ بند کر دی ہے اور بلوچستان حکومت نے بھی بین الصوبائی ٹرانسپورٹ بند کرنے کا حکم جاری کر دیا ہے۔