05:50 pm
سندھ میں کورونا وائرس وزیراعلیٰ سندھ کی فیملی کی وجہ سے پھیلا، ارباب غلام رحیم

سندھ میں کورونا وائرس وزیراعلیٰ سندھ کی فیملی کی وجہ سے پھیلا، ارباب غلام رحیم

05:50 pm

کراچی (نیوز ڈیسک) سابق وزیر اعلیٰ سندھ ارباب غلام رحیم نے سندھ میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کا الزام وزیراعلیٰ سندھ کی فیملی پر لگا دیا۔ تفصیلات کے مطابق وزیر اعلیٰ سندھ کے بہنوئی بھی کورونا وائرس میں مبتلا ہو گئے تھے۔مراد علی شاہ کے بہنوئی اور سندھ حکومت
میں گریڈ 19 کے سرکاری افسرآصف حیدر شاہ ایران سے کراچی پہنچے تھے جنہیں ہلکے بخار کی شکایت تھی جس کے بعد شک کی بنا پر ان کا کووڈ-19 کا ٹیسٹ کیا گیا جس میں کورونا وائرس کی علامات پائی گئیں۔جس کے بعد انہیں گھر میں ہی آئسولیشن میں رکھا گیا ہے جب کہ اہل خانہ کی بھی نگرانی کی جارہی ہے، اس کے علاوہ یہ شخصیت جس پرواز کے ذریعے کراچی پہنچی اس کے مسافروں کا ڈیٹا بھی جمع کیا جارہا ہے۔تاہم اب سابق وزیر اعلیٰ سندھ ارباب غلام رحیم کا کہنا ہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس مراد علی شاہ کی فیملی کی وجہ سے آیا ہے۔کیونکہ ان کے خاندان کے کچھ لوگ ایران زیارت کے لیے گئے تھے۔وہاں سے واپسی پر ان کو آئسولیشن سے زبردستی شہر میں لایا گیا۔جس کے وائرس پھیلا۔ارباب رحیم خان نے الزام عائد کیا کہ مراد علی شاہ کی فیملی کی وجہ سے سندھ میں وائرس پھیلا ہے۔انہیں ایسا نہیں کرنا چاہئے تھا،خواہ مخواہ وائرس کو سندھ میں لایا گیا۔۔خیال رہے کہ دنیا بھر میں تباہی کے بعد پاکستان میں بھی کورونا وائرس کے وار جاری ہیں۔ملک بھر میں اب تک 453 تصدیق شدہ کیسز سامنے آگئے ہیں۔ کیسز کی تعداد چند ہی دنوں میں چار سو سے زائد ہو گئی ہے ۔ کورونا وائرس کی تعداد کا تیزی سے بڑھنا ہی اسے خطرناک بناتا ہے۔ ملک میں 3 افراد بھی اس خطرناک وائرس سے جان بحق ہو چکے ہیں۔ کُل 453 کیسز میں سے سب سے بڑی تعداد سندھ سے ہے ۔ جس کی وجہ ایران زائرین کی سندھ میں بڑی تعداد میں واپسی ہے ، اب تک 245 کیسز سامنے آچکے ہیں۔ جبکہ دوسرے نمبر پر بلوچستان ہے جہاں کیسز کی تعداد 81 ہو چکی ہے۔آبادی کے اعتبار سے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں 78 افراد اس خطرناک وائرس سے متاثر ہو چکے ہیں۔ خیبر پختونخوا میں 23 ،وفاقی دارالحکومت میں 2 گلگت میں 23 جبکہ آزاد
کشمیر میں اب تک ایک مریض سامنے آیا ہے۔