08:16 am
لاہور ہائیکورٹ نے نیب کو شہباز شریف  کو گرفتار کرنے سے روک دیا

لاہور ہائیکورٹ نے نیب کو شہباز شریف کو گرفتار کرنے سے روک دیا

08:16 am

لاہور(نیوزڈیسک) لاہور ہائیکورٹ نے شہبازشریف کی عبوری ضمانت منظور کر لی ہے۔ تفصیلات کے مطابق آج لاہور ہائیکورٹ میں شہبازشریف کی درخواست ہو سماعت ہوئی ہے جس کی سماعت جسٹس طارق عباسی کی سربراہی میں 2 رکنی بنچ نے کی ہے۔ اس سماعت کے دوران شہبازشریف کی عبوری ضمانت منظور کر لی گئی ہے جس کے بعد عدالت نے نیب کو 17 جون تک گرفتاری سے روک دیا ہے۔
اس کے علاوہ بتایا گیا ہے کہ ضمانت 5لاکھ روپے کے مچلکوں کےعوض منظورکی گئی۔ اس موقع پر شہبازشریف کے وکیل کی جانب سے موقف اختیار کیا ہے کہ شہبازشریف کے کیس کا معاملہ ابھی تففتیشی مرحلہ میں تھا، اس سے قبل ہی ان کے خالف گرفتاری کے وارنٹ جاری کر دیئے گئے ہیں۔ وکیل کی جانب سے مزید کہا گیا ہے کہ نیب نے جو جو رکارڈ مانگا وہ دے دیا پھر بھی نیب گرفتاری کے لیے بے تاب ہے ۔ اس موقع پر لاہور ہائیکورٹ نے کیس کی سماعت کرتے ہوئے 5 لاکھ کے مچکلوں کے عوض شہبازشریف کی عبوری ضمانت کی درخواست کو مںظور کر لیا ہے جس کے بعد عدالت کا ملزم کو ضمانتی مچلکے ڈپٹی رجسٹرار جوڈیشل کے پاس جمع کروانے کا حکم دے دیا گیا ہے۔ کیس کی سماعت کے دوران نیب کی جانب سے پیش ہونے والے وکیل نے اس فیصلے کی مخالفت کی ہے جس وکیل فیصل بخاری کا کہنا تھا کہ نیب شہباز شریف کی ضمانت کی مخالفت کرے گا۔ خیال رہے کہ شہباز شریف کا لاہور ہائی کورٹ میں آمدن سے زائداثاثہ جات اورمنی لانڈرنگ کیس میں عبوری ضمانت کے لیے پیش ہوئے ہیں ۔ اس حؤالے سے شہبازشریف نے نیب کی گرفتاری وارنٹ کے خلاف عبوری ضمانت کی درخواست جمع کروائی تھی جس حوالے سے تاثر دیا جا رہا تھا کہ شاید اس پیشی سے قبل ان کو گرفتار کر لیا جائے گا۔ لیکن ایسا نہیں ہوا ہے، شہبازشریف کی درخواست پو سماعت ہوئی ہے جسے لاہور ہائیکورٹ نے منظور کر لیا ہے۔ اس سماعت کے دوران شہبازشریف کی عبوری ضمانت منظور کر لی گئی ہے جس کے بعد عدالت نے نیب کو 17 جون تک گرفتاری سے روک دیا ہے