11:35 am
بزدار کرپشن کیس، مشکلات کھڑی کرنے والے حکومتی وزیر نکلے، عثمان بزدار نے دو سالوں میں ایک بہت بڑی غلطی کی،

بزدار کرپشن کیس، مشکلات کھڑی کرنے والے حکومتی وزیر نکلے، عثمان بزدار نے دو سالوں میں ایک بہت بڑی غلطی کی،

11:35 am


لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک )بزدار کرپشن کیس، مشکلات کھڑی کرنے والے حکومتی وزیر نکلے، عثمان بزدار نے دو سالوں میں ایک بہت بڑی غلطی کی، وہ غلطی کیا تھی ؟ بڑا انکشاف کر دیا گیا ۔۔۔ سینئر صحافی عارف حمید بھٹی کا کہنا ہے کہ وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار کرپشن کیس میں نیب کی معاونت اہم صوبائی وزیر نے کی ہے جو خود وزیر اعلی کے امیدوار بھی ہیں۔عارف حمید بھٹی نے بتایا کہ نیب آفس میں وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار کے لیے حالات نہ سازگار تھے
۔نیب کی پانچ رکنی ٹیم نے ان سے سوالات کیے جبکہ عثمان بزدار کسی بھی سوال پر مطمئن نہیں کر سکے۔ نیب نے وزیراعظم کی جانب سے جو سمریاں بھجوائی گئی تھی ،وہ بھی پیش کی گئی۔جس میں بار بار شراب کے لائسنس کے بارے میں سوالات پوچھے گئے۔ ایک درجن سے زائد سوالات کئے گئے مگر عثمان بزدار نے کسی ایک بات کا جواب نہیں دیا۔عارف حمید بھٹی نے مزید کہا کہ عثمان بزدار کرپشن کیس میں نیب کی معاونت بہت اہم صوبائی وزیر نے کی ہے جو خود وزیر اعلیٰ کے امیدوار بھی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عثمان بزدار نے دو سالوں میں ایک بہت بڑی غلطی کی کہ ایسا وزیر جو پنڈی سے راجہ ہے ان پر اعتماد کرکے نقصان کیا۔خیال رہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب پر نجی ہوٹل کو شراب کا لائسنس دینے کا الزام ہے، جو کہ وزیراعلیٰ کے دائرہ اختیار میں نہیں ہے۔ وزیراعلیٰ نے محکمہ ایکسائز پر دباؤ ڈال کر لائسنس جاری کروایا۔ ان پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ انہوں نے پانچ کروڑ روپے لے کر لائسنس جاری کروایا ہے۔ عثمان بزدارنیب کو تحریری بیان کے ساتھ سوالات کے جواب بھی دیں گے۔ دوسری جانب سینئر تجزیہ کارسلیم بخاری کا کہنا ہے کہ عثمان بزدارکیخلاف کاروائی متوازن کرنے کیلئے کی جاسکتی ہے، نیب میں عثمان بزدار کی گردن تو پھنسے گی، دیکھنا یہ ہے نیب اسی پیشی پر ان کو گرفتارکرکے جیل بھیجتی ہے یا نہیں۔ انہوں نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ نیب کی کاروائیوں کودو طریقے سے دیکھ سکتے ہیں کہ ایک یہ حکومت پر تنقید ہورہی تھی کہ نیب کو اپوزیشن کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنانے کیلئے استعمال کیا جارہا ہے۔ جبکہ نیب کو دونوں جانب ایک جیسا رویہ رکھنا چاہیے۔ حکومت کے ساتھ بیٹھے لوگ جو الیکشن میں فصلی بٹیرے پی ٹی آئی میں شامل ہوئے تھے۔ ان کو کیوں نہیں پکڑا جا رہا؟ ایسے لوگوں کیخلاف اپوزیشن اور میڈیا پر بھی آواز بلند کی جارہی تھی۔

تازہ ترین خبریں