"

آٹھ روپے بیس پیسے،ڈالر کی قیمت کو چند ہی گھنٹوں میں پر لگ گئے۔

’’8روپے 20پیسے ‘‘ ڈالر کی قیمت کو اچانک گیئر لگ گئے، کرنسی کا کروبار کرنے والوں کیلئے اہم خبر ڈالر کی قیمت ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ،ڈالر ایک روپیہ اضافے سے 168 پر پہنچ گیا۔ تفصیلات کے مطابق ڈالر کی قیمت ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے ، انٹربینک میں ڈالر 168 روپے کا ہوگیا، گزشتہ چار روز کے دوران ڈالر 8 روپے 20 پیسے مہنگا ہوا ۔ہے۔ ماہرین نے سود میں کمی کو بھی ڈالر کی قیمت میں اضافے کی وجہ قرار دےد یا ، ان کا کہنا ہے کہ بیرون ملک سرمایہ کار نے بڑی تعداد میں سرمایہ نکالا۔ سٹیٹ بینک کے گورنر رضا باقر نے کہا ہے کہ کرونا وائرس کے باعث غیر ملکی سرمایہ کار نقد رقم کو ہاتھ میں رکھنے کے لیے پاکستان سمیت دنیا بھر سے اپنی سرمایہ کاری واپس نکال رہے ہیں۔ڈالر کی قدر میں ہوشربا اضافے کے باعث ملکی قرضوں کے بوجھ میں اربوں روپے کا اضافہ ہوگیا ہے۔ ماہرین نے سود میں کمی کو بھی ڈالر کی قیمت میں اضافے کی وجہ قرار دےد یا ، ان کا کہنا ہے کہ بیرون ملک سرمایہ کار نے بڑی تعداد میں سرمایہ نکالا۔ گزشتہ روز امریکی ڈالر کی قیمت میں اضافہ ہو تھا اور پاکستانی کرنسی کے مقابلے میں167وپے کا ہوگیا تھا جس کے نتیجے میں میں بیرونی قرضوں میں اربوں روپے کا بھی اضافہ ہوگیا ہے۔ انٹر بینک میں ڈالر کی قیمت میں 5 روپے 90 پیسے کا اضافے ہوا ہے جس سے ڈالر 167 روپے 50پیسے میں آوپن مارکیٹ میں فروخت کیا گیا۔9 ماہ بعد ڈالر اتنی مہنگی سطح پر ٹریڈ ہوا جبکہ انٹر بینک میں امریکی کرنسی کی قدر میں تین روز کے دوران 6 روپے 33 پیسے کا اضافہ ہوچکا ہے۔ غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے گھریلو قرضوں اور اسٹاک مارکیٹوں سے قلیل مدتی سرمایہ کاری نکالنے سے روپے کی قدر میں گراوٹ آئی۔ اقتصادی ماہرین کے مطابق حکومت کی جانب سے شرح سود میں ڈیڑھ فیصد کمی کے باعث سرمایہ کار پاکستان سے اپنا پیسہ نکال رہے ہیں جو ڈالر مہنگا ہونے کا سبب بن رہا ہے۔