"

پشاورکے علاقے سے افسوس ناک خبر۔

بڈھ پیر کے قبرستان سے بچی کی لاش برآمد ، کچھ دن پہلے بھی اس علاقے سے ایک بچے کی لاش برآمد ہوئی تھی ، لاشیں کس حالت میں برآمد ہوئیں ؟ عوام میں خوف و ہراس پھیل گیا ۔۔۔ تفصیلات میں جانے سے قبل ۔۔۔۔ پشاور کے نواحی علاقے میں واقع قبرستان سے کمسن بچی کی سوختہ لاش برآمد ہوئی ہے۔ نجی ٹی وی چینل کی رپورٹ کے مطابق پشاور کے علاقے بڈھ بیر میں واقع سیفن قبرستان سے چھ سالہ بچی کی جلی ہوئی لاش برآمد ہوئی ہے، جس کی شناخت 6 سالہ بچی سے ہوئی۔ رپورٹ کے مطابق یہ ایک ہفتے سے بھی کم وقت میں اس علاقے میں اپنی نوعیت کا دوسرا واقعہ تھا جہاں گزشتہ ہفتے کے روز ایک پڑوس کے گاؤں سے 4 سالہ بچے کی لاش ملی تھی جس کا پیٹ پھٹا ہوا تھا جبکہ بچی کی لاش بلوخیل بالا کے علاقے سے ملی ہے جو بڈھ بیر پولیس اسٹیشن کی حدود میں آتا ہے۔ پولیس نے کمسن بچی کی لاش کو ضابطے کی کارروائی کے لیے اسپتال منتقل کردیا،کمسن بچی کے والد کا کہنا تھا کہ بچی کو کبھی پھول سے بھی نہیں مارا انہوں نے بتایا کہ بچی کو دادا نے 10 روپے دیے تھے جس کے بعد وہ قریبی دکان پر گئی تھی لیکن پھر وہ واپس نہیں آئی۔ ، پولیس اور رہائشیوں نے بتایا کہ بچی بدھ کی سہ پہر 3بجے کے قریب لاپتہ ہوگئی تھی جب کہ اس کی جلی ہوئی لاش جمعرات کی صبح ملی تھی۔ پشاور کے ایس ایس پی (آپریشنز) منصور امان نے بتایا کہ بدھ کی شام بچی کے لاپتا ہونے کی اطلاع مقامی پولیس اسٹیشن کو دی گئی اور اسی دن پولیس حکام نے اس کے والد سے رابطہ کرلیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ پولیس اس علاقے میں لاپتا بچی کی تلاش میں بھی شریک ہوئی لیکن جمعرات کی صبح ایک مقامی قبرستان سے اس کی جلی ہوئی لاش ملی ہے۔ انہوں نے کہا ، "قبرستان کے اندر گورکن نے دیکھا کہ آگ لگی ہوئی ہے اور جب وہ وہاں پہنچا تو اسے انسانی لاش ملی، انہوں نے مزید کہا کہ اس معاملے کی اطلاع بعد میں پولیس کو دی گئی۔ ۔ بچی کے اہلخانہ اور اہل علاقہ نے کوہاٹ روڈ پر احتجاج کیا، مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ 24 گھنٹے کے اندر قاتلوں کو گرفتار کرکے قرار واقعی سزا دی جائے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ بچی بالو خیل کی رہائشی ہے، گزشتہ روز گھر سے لاپتا ہوئی تھی، بچی کی گمشدگی کی رپورٹ بھی درج کرائی گئی تھی۔ سی سی پی او پشاور نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے ملزمان کی گرفتاری کے لیے ایس ایس پی انویسٹی گیشن کی نگرانی میں خصوصی ٹیم تشکیل دے دی۔ ایس ایس پی کا کہنا تھا کہ سائنسی بنیادوں پر شواہد حاصل کرلیے، قاتلوں کو کیفر کردار تک پہنچائیں گے۔ ایس ایس پی منصور امان نے بتایا کہ سٹی پولیس نے اپنے بہترین افسران کو اس معاملے کی تفتیش کی ذمے داری سونپی ہے جبکہ انٹیلی جنس اور فرانزک شواہد اکٹھا اور پروفائلنگ اور تفتیش کے لیے ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں۔ دوسری جانب وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے ملوث افراد کو گرفتار کرنے کی ہدایت جاری کردیں۔ یاد رہے کہ گزشتہ دنوں تھانہ بڈھ بیر کی حدود سے پانچ سال کے بچے کی لاش برآمد ہوئی تھی۔