03:26 pm
دورہ پاکستان، سری لنکن ٹیم کے نخرے آسمان پر جاپہنچے،اہم کھلاڑیوں نے پاکستان آنے سے صاف انکار کردیا

دورہ پاکستان، سری لنکن ٹیم کے نخرے آسمان پر جاپہنچے،اہم کھلاڑیوں نے پاکستان آنے سے صاف انکار کردیا

03:26 pm

کولمبو (نیوز ڈیسک) سری لنکن کرکٹرز دورئہ پاکستان پر ناک بھوں چڑھانے لگے ،کچھ کھلاڑی کیریبیئن پریمیئر لیگ کے دوران ٹور شیڈول کرنے پر خوش نہیں ہیں ۔پاکستان ستمبر،اکتوبر میں3 ون ڈے اور اتنے ہی ٹی ٹونٹی میچزکیلئے سری لنکن ٹیم کی اپنے ملک میں میزبانی کرےگا،2 ٹیسٹ کی سیریز دسمبر میں کھیلی جائے گی۔حال ہی میں دونوں بورڈزکے درمیان اس حوالے سے باقاعدہ معاہدہ طے پاگیا۔ا
لبتہ بڑی رکاوٹ پلیئرز کی صورت میں سامنے آرہی ہے جو دورے میں دلچسپی نہیں رکھتے، خاص طور پر وکٹ کیپر بیٹسمین نروشن ڈیکویلا اور آل راؤنڈر تھشارا پریرا کے نام سامنے آئے جوباہمی سیریز کیلئے پاکستان نہیں جانا چاہتے۔رپورٹ میں یہ بھی دعویٰ کیا گیا کہ کچھ دیگرکرکٹرز بھی ایسی ہی سوچ رکھتے ہیں مگر ابھی ان کے نام سامنے نہیں آئے، نیروشن ڈکویلا اور تھیسارا پریرا کیریبیئن پریمیئر لیگ کھیلنے کے خواہاں اور اس سلسلے میں بورڈ سے باقاعدہ اجازت کیلئے درخواست کرچکے ہیں، سی پی ایل 4 ستمبر سے 12 اکتوبر تک کھیلی جائےگی۔سلیکٹرز نے جن ابتدائی 24 ممکنہ کھلاڑیوں کا انتخاب کیا ان میں یہ دونوں بھی شامل ہیں،اس لیے وہ جانا چھڑانا چاہتے ہیں۔ ڈیکویلا کی خدمات سی پی ایل ٹیم سینٹ لوشیا سٹارز نے حاصل کیں جبکہ ہارڈ ہٹنگ آل راؤنڈر پریرا بھی اسی کا حصہ ہیں،ان دونوں کے ہمراہ لاستھ مالنگا اور اسورو ادانا نے بھی سی پی ایل کیلئے مختلف ٹیموں سے معاہدے کررکھے ہیں۔پاکستان اور سری لنکا کے کرکٹ بورڈ نے پہلے سے طے شدہ پروگرام کو تبدیل کرتے ہوئے پہلے محدود اوورز کے میچز اور بعد میں ٹیسٹ سیریز کھیلنے کا فیصلہ کیا۔ پی سی بی کی خواہش تھی کہ وہ سری لنکا کی 2 ٹیسٹ میچزمیں میزبانی کرے مگر ایس ایل سی سینئر فارمیٹ کیلئے ٹیم بھیجنے پر راضی نہیں ہوا۔یاد رہے کہ 2009 ءمیں سری لنکن ٹیم پر ہی لاہور میں دہشتگرد حملہ ہوا تھا جس کے بعد پاکستان انٹرنیشنل کرکٹ کیلئے نوگو ایریا بن گیا، ان 10 برس کے دوران زمبابوے (2015ئ)، ورلڈ الیون (2017ئ)، سری لنکا (2017ئ) اور ویسٹ انڈیز (2018ئ) نے سفید بال کی کرکٹ کیلئے پاکستان کا رخ کیا۔