04:00 pm
طالبان ، امریکہ اور ستم رسیدہ کشمیری 

طالبان ، امریکہ اور ستم رسیدہ کشمیری 

04:00 pm

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گذشتہ دنوں افغان طالبان کے ساتھ کیمپ ڈیوڈ میں شروع ہونے والے مذاکرات اچانک منسوخ کردیئے تھے جس پر پوری دنیا کو بڑی حیرت ہوئی تھی کیونکہ افغان طالبان اور اشرف غنی کے مابین مذاکرات کا یہ فائنل راؤنڈ تھا جس کی سربراہی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کررہے تھے۔ ان مذاکرات کے ذریعے جہاں افغانستان میں امن قائم ہوتا وہیں امریکہ بھی افغانستان سے اپنی فوج سمیت نکل جاتا لیکن مذاکرات کی منسوخی کے بعد یہ آرزو پوری نہیں ہوسکی۔ آئندہ کیا افغان طالبان اور امریکہ مابین مذاکرات ہوں گے ؟ اس کے بارے میں کچھ نہیں کہا جاسکتا اور نہ ہی امریکی انتظامیہ اس سلسلے پر کسی قسم کے خیالات کا اظہار کررہی ہے تاہم عالمی امور کے ماہرین کا خیال ہے کہ امریکہ جلد یا بدیر افغان طالبان سے مذاکرات شروع کردے گا کیونکہ افغانستان میں گذشتہ 18سال سے امریکہ کو کسی قسم کی کامیابی حاصل نہیں ہوئی بلکہ ساری دنیا میں یہ تاثر پایا جارہا ہے کہ امریکہ افغانستان میں جنگ ہار چکا ہے۔ اب صورتحال نہ امن کی ہے اور نہ جنگ کی، لیکن یہ حقیقت اپنی جگہ موجود ہے کہ اگر یہ مذاکرات کامیاب ہوجاتے تو سب سے زیادہ فائدہ افغان عوام کو اور پاکستان کو پہنچتا لیکن امریکہ کی ہٹ دھرمی کی وجہ سے مذاکرات نہ صرف معطل ہوئے بلکہ ایک بار پھر پاکستان کو افغانستان کی جانب سے دہشت گردی کا سامنا ہے جیسا کہ بالائی سطور میں لکھا ہے کہ پاکستان امریکہ اور طالبان کے ساتھ مذاکرات کے لئے زور دے رہا ہے کیونکہ اگر افغانستان میں امن قائم ہوجاتا ہے توسب سے زیادہ تقویت پاکستان کو ہوگی۔ یہی وجہ ہے کہ پاکستان کی حکومت امریکہ سے ملتمس ہے کہ مذاکرات کا دور دوبارہ شروع کیا جائے۔اسی طرح اس خطے کے دیگر ممالک مثلاً ایران روس اور چین کی بھی یہی خواہش ہے کہ امریکہ افغان طالبان کے ساتھ دوبارہ مذاکرات شروع کرے تاکہ ایک طرف امریکہ کی فوج افغانستان سے چلی جائے تو دوسری طرف اس پورے خطے کو امن کی صورت میں معاشی ترقی کے بےپناہ امکانات میسر ہوں ۔ 
دوسری طرف امریکہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی مکمل حمایت کررہا ہے۔اس کی واضح مثال حال ہی میں امریکہ کے شہرہیوسٹن میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی مودی کی ریلی میں شرکت سے ظاہر ہوتاہے۔ امریکہ نے انتہائی بھونڈے انداز میں پوری دنیا کو یہ بتادیا ہے کہ امریکہ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی پالیسی کی نہ صرف حمایت کرتا ہے بلکہ آئندہ مسلمان دشمن نریندر مودی اس خطے میں جو کچھ بھی کرے گا ، امریکہ اس کی حمایت کرے گا۔امریکہ کا یہ رویہ جنوبی ایشیاء میں امن کے پس منظر میں ایک اچھا شگون نہیں ہے بلکہ ٹرمپ کے اس رویہ سے بھارت کو پاکستان کے خلاف جنگی جنون پیدا کرنے میں اور زیادہ مدد ملے گی۔ ٹرمپ کی بھارت نواز پالیسی سے یہ بات ظاہر ہورہی ہے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی اور ظلم پر ذرا برابر بھی افسوس نہیں ہے اور نہ ہی امریکی صدر نے کھل کر مقبوضہ کشمیر میں مسلمانوں کی حالت زار پر افسوس کا اظہار کیاہے۔اگر امریکہ چاہے تو مقبوضہ کشمیر میں کرفیو اٹھانے کے لئے بھارت پر زور ڈال سکتا ہے لیکن ایسا ہوتا ہوا نظر نہیں آرہا۔ 
گذشتہ 55دنوں سے مقبوضہ کشمیر میں کرفیوکی وجہ سے کشمیریوں پر ہر گزرتے دن کے ساتھ عرصہ حیات تنگ ہوتاجارہاہے۔ فاقوں اور بھوک کی وجہ سے بچے اور بزرگ ،مرد اور عورتیں مر رہی ہیں۔ ہر چند کے عالمی سطح پر بھارت کی فوج کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کے مسلمانوں پر ہونے والے ظلم کے بارے دنیا کے تمام اخبارات لکھ رہے ہیں اور مذمت کررہے ہیں ، نیز امریکہ پر زور دے رہے ہیں کہ فی الفور کرفیو اٹھایا جائے تاکہ کشمیری ایک آزاد فضا میں آکر اپنا آئندہ کا لائحہ عمل تیار کرسکیں۔ مقبوضہ کشمیر میں جو کچھ بھی ہورہا ہے، یہ اس عہد کا سب سے بڑا المیہ ہے جس کا جتنا بھی افسوس کیا جائے کم ہے چنانچہ جنوبی ایشیاء میں حالات کو معمول پر لانے کے لئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو دو اہم کام کرنے ہوں گے، پہلا یہ کہ افغان طالبان کے ساتھ فی الفور مذاکرات شروع کئے جائیں،دوسرا بھارت پر دباؤ ڈال کر وہاں سے کرفیواٹھایا جائے۔ 
امریکہ کیونکہ اس دنیا کی بڑی طاقت ہے اور اس کے پاس بے پناہ فوجی اور معاشی وسائل موجود ہیں۔اگروہ چاہے تو نہ صرف ہندوستان و پاکستان کے درمیان امن قائم ہوسکتا ہے اور طالبان سے مذاکرات کی صورت میں امریکہ عزت کے ساتھ وہاں سے نکل سکتا ہے لیکن ہیوسٹن کے شہر میں امریکی صدر نے ٹرمپ کے ساتھ جس اظہار محبت کا مظاہرہ کیا ہے اس سے یہ ظاہر ہورہاہے کہ اس کے عزائم ٹھیک نہیں ہیں۔وہ پاکستان کوبھارت کے ذریعے عدم استحکام سے دوچار کررہاہے اور اس کی معیشت کو بھی تباہ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔
 اس پس منظر میں افغانستان کی جانب سے پاکستان پر جو حملے ہورہے ہیں جس میں پاکستان کے فوجی شہید ہورہے ہیں۔یہ سب کچھ ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ہو رہا ہے جس کے ڈانڈے امریکہ سے ملتے ہیں۔ آئندہ چند ماہ میں اگر یہ صورتحال تبدیل نہیںہوتی تو ممکن ہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک خطرناک جنگ چھڑ سکتی ہے جس کی ساری ذمہ داری امریکہ پر عائد ہوگی کیونکہ امریکہ کے ہی اشارے پر مسلمان دشمن نریندر مودی نے مقبوضہ کشمیر پر قبضہ کیا ہے اور اس کے ارادے آئندہ پاکستان کے پس منظر میں انتہائی خطرناک ہیں لیکن یہ بات بھارت کو فراموش نہیں کرنی چاہیے کہ پاکستان بھارت کی ہر قسم کی جارحیت کا مقابلہ کرنے کے لئے ہمہ وقت تیار ہے پاکستان ایک بنانا ری پبلک نہیں ہے بلکہ ایک ایٹمی قوت ہے جو انتہائی نامساعد حالات میں اپنے دشمن کے خلاف اس خطرناک اسلحے کو استعمال کرسکتا ہے۔ پاکستان کے پاس یہ آپشن کھلاہے۔

تازہ ترین خبریں

حکومت کی موثر اقتصادی پالیسیوں کے باعث ملکی معیشت استحکام کی جانب گامزن ہے، شفقت محمود

حکومت کی موثر اقتصادی پالیسیوں کے باعث ملکی معیشت استحکام کی جانب گامزن ہے، شفقت محمود

 حاملہ خواتین بھی کورونا ویکسین لگواسکتی ہیں۔ڈاکٹر فیصل سلطان

حاملہ خواتین بھی کورونا ویکسین لگواسکتی ہیں۔ڈاکٹر فیصل سلطان

انسداد دہشتگردی عدالت نے رکن قومی اسمبلی  علی وزیر پر فرد جرم عائد کردی۔

انسداد دہشتگردی عدالت نے رکن قومی اسمبلی  علی وزیر پر فرد جرم عائد کردی۔

انگلینڈ کا دورہ پاکستان کے انکار پر دکھ ہوا. چئیرمین پی سی بی رمیز راجہ 

انگلینڈ کا دورہ پاکستان کے انکار پر دکھ ہوا. چئیرمین پی سی بی رمیز راجہ 

 ملکی سربراہ کو ملنے والے تحائف ماضی کی طرح غائب نہیں ہوتےبلکہ توشہ خانہ میں جمع کروائے جاتے ہیں۔ شہباز گل

ملکی سربراہ کو ملنے والے تحائف ماضی کی طرح غائب نہیں ہوتےبلکہ توشہ خانہ میں جمع کروائے جاتے ہیں۔ شہباز گل

چہلم امام حسینؓ کے موقع پر موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ

چہلم امام حسینؓ کے موقع پر موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ

قومی کرکٹ ٹیم  کے کھلاڑی 23 ستمبر سے نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں جلوہ گر ہوں گے

قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی 23 ستمبر سے نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں جلوہ گر ہوں گے

پی ٹی آئی،مسلم لیگ ن اورپاکستان پیپلز پارٹی کاتصادم صرف دکھاوے کی سیاست ہے۔سراج الحق 

پی ٹی آئی،مسلم لیگ ن اورپاکستان پیپلز پارٹی کاتصادم صرف دکھاوے کی سیاست ہے۔سراج الحق 

ڈرائیونگ لائسنس بنوانے والوں کیلئے ایک اور سہولت کا اعلان

ڈرائیونگ لائسنس بنوانے والوں کیلئے ایک اور سہولت کا اعلان

 سواتی صاحب الیکشن کمشنر کس کی گھڑی کس کی چھڑی ہے اس سے ہمیں مطلب نہیں۔ ناصر حسین شاہ

سواتی صاحب الیکشن کمشنر کس کی گھڑی کس کی چھڑی ہے اس سے ہمیں مطلب نہیں۔ ناصر حسین شاہ

ملک کے مختلف شہروں میں تیز بارش ۔۔۔۔ بجلی فراہم کرنے والے متعدد فیڈرز پر فالٹ اور ٹرپنگ جاری

ملک کے مختلف شہروں میں تیز بارش ۔۔۔۔ بجلی فراہم کرنے والے متعدد فیڈرز پر فالٹ اور ٹرپنگ جاری

 اپوزیشن جماعتیں صرف ذاتی مفادات کا تحفظ چاہتی ہیں۔عثمان بزدار

اپوزیشن جماعتیں صرف ذاتی مفادات کا تحفظ چاہتی ہیں۔عثمان بزدار

مریم نواز نے جاتی امرااراضی انتقال منسوخی کیس میں دوبارہ فریق بنانے کی درخواست دائر کردی

مریم نواز نے جاتی امرااراضی انتقال منسوخی کیس میں دوبارہ فریق بنانے کی درخواست دائر کردی

 بی آر ٹی میں سفر کرونا ویکسینیشن سرٹیفکیٹ سے مشروط کر دیا گیا ہے۔

بی آر ٹی میں سفر کرونا ویکسینیشن سرٹیفکیٹ سے مشروط کر دیا گیا ہے۔