07:00 am
حسن و جمال مصطفیٰ     ﷺمرحبا مرحبا

حسن و جمال مصطفیٰ     ﷺمرحبا مرحبا

07:00 am


ایک روایت میں ہے کہ حضرت آدم صفی اللہ علیٰ نبینا وعلیہ الصلوۃ والسلام نے جو شجرہ ممنوع کا پھل کھایا تھاتو اسکی ندامت میں
(گزشتہ سے پیوستہ)
ایک روایت میں ہے کہ حضرت آدم صفی اللہ علیٰ نبینا وعلیہ الصلوۃ والسلام نے جو شجرہ ممنوع کا پھل کھایا تھاتو اسکی ندامت میں بہت توبہ کی بہت گریہ وزاری فرمائی۔بہت روئے بہت روئے۔ یعنی جو بہت زیادہ رونے والی شخصیات میں ان کا نام سر فہرست ہے۔حضرت آدم علی نبینا و علیہ الصلوۃ والسلام نے اللہ عزوجل کی بارگاہ میںعرض کیا۔ یا اللہ عزوجل ! محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے صدقے میںمیری خطا معاف فرمااور میری توبہ قبول کر۔اللہ تبارک وتعالی کی طرف سے ارشاد ہوا کہ تونے محمد ﷺ کو کہاں سے پہچانا۔عرض کی میں نے جنت میں ہر جگہ لاالہ الااللہ محمد رسول اللہ  جل جلالہ وﷺ لکھا ہوا پایا۔ میں نے یہ سمجھ لیا کہ یہ ضرورتیرا محبو ب ہے کہ تونے اپنے نام کے ساتھ اس کا نام ذکر فرمایا ہے اور یہ ساری کائنات سے افضل ہے۔اگر ان سے کوئی اور افضل ہوتا تو اس کا نام لکھتا۔
اللہ عزوجل نے اپنے پیارے محبو ب ﷺ کے وسیلے سے حضرت سیدنا آدم صفی اللہ علی نبینا و علیہ الصلوۃ والسلام کی اس خطا کو بخش دیا۔آدم علیہ السلام بخشے بخشائے ہیں ان کا وہ فعل کوئی گناہ نہیں تھا ایک خلاف اولیٰ عمل تھا۔
حضرت آدم علیہ السلام سرکار ﷺ سے بہت محبت کرتے تھے۔چنانچہ بعض روایت میں ہے کہ 
آدم صفی اللہ علی نبینا و علیہ الصلوۃ والسلام نے اپنے بیٹے کوبھی سرکا ر ﷺ کا ادب کرنے کی تاکید فرمائی کہ ان کا نام محمد ﷺ ہے جنت اور عرش پر ہر جگہ لکھا ہوا ہے۔اس نام کی تعظیم کرتے رہنا۔
 مدارج النبوۃ میں شیخ محقق ، محقق علی الاطلاق عبدالحق محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ نے اپنا بڑا پیار ا واقعہ درج کیا ہے۔ آپ کو ایک بار سیدنا غوث الثقلین حضور سیدی غوث اعظم رضی اللہ عنہ کی خواب میں زیارت ہوئی۔آپ حضورغوث پاک کو دیکھ کر تعظیم کے لئے کھڑے ہوگئے۔غوث پاک رضی اللہ عنہ بیٹھے ہوئے تھے۔لوگوں نے عرض کی کہ محمد عبدالحق سلام کے لئے حاضر ہوئے ہیں۔سرکار غوث پاک رضی اللہ عنہ فوراً کھڑے ہوگئے۔آپ سے معانقہ کیا اور فرمانے لگے کہ تم پر دوذخ کی آگ حرام ہے۔سیدنا شیخ محمد عبدالحق محدث فرماتے ہیںکہ یہ بشارت اس نام کی وجہ سے ہے کہ میر انام محمد عبدالحق ہے ۔
سیدنا شیخ محمد عبدالحق محدث دھلوی رحمتہ اللہ علیہ کے نام میں محمد نام شامل ہے اس لئے آپ نے دیکھا کہ حضور غوث پاک رضی اللہ عنہ نے ان کی حوصلہ افزائی فرمائی،ادب کیا اور بشارت سنائی کہ جہنم تم پر حرام ہے۔ دراصل حدیث مبارکہ میں یہ مضامین موجود ہیں ۔ مشکوۃ شریف جلداول کی یہ حدیث پاک ہے ۔
جب قیامت کا روز ہوگا تو اعلان کیا جائے گا۔خبردار وہ شخص کھڑا ہوجائے جس کا نام محمد ہے اورجنت میں داخل ہوجائے۔
ان شآء اللہ الیاس قادری بھی جنت میں اسی طرح جائے گا کہ اس کے نام کے آگے بھی محمد ہے۔
حدیث پاک میں ہے کہ سرکار نامدار ، مدینے کے تاجدار، رسولوں کے سالار، نبیوں کے سردار ، غیبوں پر خبردارباذن پروردگار،شفیع روز شمار جناب احمد مختار ﷺ فرمان مشکبار ہے کہ پرودگار عزوجل نے فرمایا کہ مجھ اپنی عزت وجلال کی قسم میں اسکو دوزخ میں عذاب نہ دونگا جس کا نام محمد ہوگا۔
ہم رسول اللہﷺ کے 
جنت رسول اللہﷺ کی
ایک اور ایمان افروز حدیث ملاحظہ ہو
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ سرکار نامدار ،مدینے کے تاجدار، رسولوں کے سالار، نبیوں کے سردار ، غیبوں پر خبردارباذن پروردگار،شفیع روز شمار جناب احمد مختار  ﷺ نے فرمایا کہ دو آدمیوں کا بارگاہ خداوندی میں کھڑا کیا جائے گا۔ان کا حکم دیا جائے گاکہ جنت میںداخل ہوجاؤ۔ وہ عرض کریں گے ہمارے پرودگار کس وجہ سے ہم جنت کے حقدار ٹھہرئے حالانکہ ہم نے کوئی ایسا عمل نہیں کیا کہ جس کے بدلے میں ہمیں جنت مل جائے۔ اللہ تعالی ارشاد فرمائے گا۔تم دونوں جنت میں داخل ہوجاو بے شک میں نے اپنی ذات پرقسم اٹھائی ہے کہ نہ داخل کروں گا دوزخ میں اس کو جس کا نام احمد یا محمد ہوگا۔
ایک اور روایت میں ہے کہ جس کا نام محمد ہوگاحضورؐ اس کی شفاعت کرکے جنت میں داخل کریں گے۔ 
بلکہ جس گھر میں محمد کا کوئی ایک فرد ہوگاان گھر والوں کے بھی وارے نیارے ہوجائیںگے۔چنانچہ شفاء شریف میں ہے
جس گھر میں محمد نام والا ہوگاتو وہ لوگ ترقی کریں گے۔ان لوگوں کی روزی میں برکتیںدی جائیںگی۔ یہاں تک کہ ان کے پڑوسی بھی اس کی برکتیں لوٹیںگے۔
میرے محبو ب ﷺ کے نام نامی اسم گرامی میں کتنی برکتیں ہیںکہ سارا گھر بلکہ پڑوسی بھی اس سے متمتع ہونگے ۔چنانچہ اپنی اولاد کا نام محمد ہی رکھنا چاہیے۔
میرے پیارے آقا ﷺ ترغیب دلاتے ہوئے فرماتے ہیں کہ تمھارا اس بات سے کیا نقصان ہے کہ اس کے گھر میں ایک کا نام محمد ، دو کے نام محمد یا تین کے نام محمدہوں۔
ہمارے ہاں تو یہ ہوتا ہے کہ اگر ایک کا کوئی نام ہے توپورے قبیلے میںاسکانام نہیںرکھتے کہ صاحب وہ دو ہوجائیں گے ۔ لیکن ہمارے آقا ﷺ فرماتے ہیں کہ ایک ہو ں دو ہوں تین ہوںیہ تو عاشقوں کا عمل نصیب ہوتا ہے۔میں آپکو عاشقوں کے تاجدار کی بات بتاوں ۔میرے آقا عاشقوں کے بھی آقاامام احمد رضاخان رضی اللہ عنہ کے چار بیٹے تھے میرے آقا فرماتے ہیں کہ میں نے اپنے تمام بیٹوں کا نام’’ محمد ‘‘رکھا۔میر ے بھی دو بیٹے ہیں ایک کا نام میں نے احمد رکھا ہے اور دوسرے کا محمد رکھا ہے۔اگر ایک سوربار ہ بیٹے بھی ہوتے تو سب کانام بھی محمد ہی رکھتا۔
(جاری ہے)