02:06 pm
تباہی کاایک اورسمندر

تباہی کاایک اورسمندر

02:06 pm

افغانستان سے امریکہ اوربھارت دونوں ہی کوخاصے ذِلت آمیزاندازسے نکلنے کی گواہی تاریخ میں رقم ہوچکی جبکہ امریکہ کے روایتی حریف روس اورآج کی دنیامیں تیزی سے سپر طاقت بننے کاسفرطے کرنے والے چین نے اس کے پیداکردہ خلاکو کامیابی سے پرکردیا ہے۔بھارت اورامریکہ نے کابل میں جس عجلت کے ساتھ اپنے سفارت خانے خالی کئے، ایساسوچابھی نہیں جاسکتاتھالیکن روس اور چین نے ایسانہیں کیا۔ان کا پور اسفارتی عملہ کابل میں موجوداورپہلے سے زیادہ مصروف رہا۔بھارت نے جنوبی ایشیاء میں اپنی برتری برقرار رکھنے کی دھن میں مونروڈاکٹرائن سے کام لینے کی ناکام کوشش کی۔ بھارت اپنے آپ کونئی عالمی طاقت کے طورپرپیش کرنے کے خبط میں مبتلاہے۔اب سوال یہ ہے کہ افغانستان سے ذِلت آمیزانخلابھارت کے لئے خطے میں اورخطے سے باہرکیامفہوم رکھتاہے؟
پہلی بات تویہ ہے کہ افغانستان سے امریکہ کاذِلت بھراانخلاء عالمی سطح پراس کی ساکھ مزید خراب کرنے کاذریعہ بنااوراس کی عالمی سطح کی برتری بہت حدتک ختم ہوکررہ گئی ہے اوراپنی اسی برتری کے بحالی کے لئے فوری طورپریوکرین میں اپنے اتحادیوں سمیت ایک نئی جنگ میں مصروف ہے جبکہ دوسری طرف بھارت کوبھی شدیدنقصان سے دوچارہوناپڑاہے۔اس کی علاقائی سطح کی ساکھ شدیدمتاثرہوئی ہے اورجنوبی ایشیاء میں اس کی برتری کاخواب چکناچورہوگیاہے۔اس کا دعویٰ کہ وہ عالمی سطح پربرتری کے لئے کی جانے والی کوششوں کے حوالے سے توازن قائم رکھنے میں نمایاں مقام رکھتاہے اورافغانستان میں جوکچھ ہواہے،اس سے بھارت کے ایسے تمام دعوے بالکل جھوٹ ثابت ہوگئے ہیں۔اسٹریٹجک معاملات کے تناظرمیں تو آج بھارت کہیں بھی دکھائی نہیں دے رہااور یقینااگلے بیس ،تیس برس کے دوران بھی بھارت کا عالمی سیاست میں کوئی نمایاں کردارنہیں۔عالمی سطح کی ری بیلینسنگ پاور بنانے کے لئے بھارت کومعاشیات،اسٹریٹجی اورٹیکنالوجی تینوں محاذوں پرغیرمعمولی تنزلی کابھی سامناہے جس کے لئے وہ سرتوڑکوششیں کررہاہے۔ دوسری اہم بات یہ کہ بھارت کی اسٹریٹجک پالیسی مرتب کرنے والوں نے سمجھ لیاکہ بھارت نے چین کاپامردی سے سامناکرنے کے لئے چاررکنی اتحاد’’کواڈ‘‘میں شامل ہوکر اسرائیل کی طرح امریکہ کی گودمیں جگہ بنالی ہے لیکن جہاں بھارت کے افغانستان کے بارے میں تمام دعوے بھی انتہائی درجے کے مبالغے کے حامل ثابت ہونے پر شرمندگی کے ساتھ منہ چھپانے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں بچاوہی چین کے ساتھ بھارتی فوجوں کی درگت نے بھی امریکہ ومغرب پرحقیقت واضح کر دی ہے۔حقیقت تویہ ہے کہ بھارت اسٹریٹجک معاملات میں اپنی خودمختاری اوراعتمادکھو بیٹھا ہے۔ افغانستا ن کے معاملات نے ثابت کیاہے کہ بھارت اورامریکہ کی افغان پالیسی یکساں طورپرناکام نوعیت کی تھی۔امورِخارجہ کی بھارتی وزارت نے17 اگست کواپنے بیان میں کابل کی جس صورتِ حال کا ذکر کیا تھااور سفارت خانہ خالی کرنے کے حوالے سے صرف امریکہ کاذکرتھا،اس میں روس یاکسی اور طاقتورعلاقائی ملک کانام تک شامل نہ تھا۔ جوکچھ افغانستان میں ہوااس کے بعدتوجنوبی ایشیاء میں بھارت کی برتری بھوٹان تک محدودہوچکی ہے جواس کے لئے بغل بچے کی سی حیثیت رکھتا ہے۔ بھارت نے خشکی سے گِھرے ہوئے ایک اورملک نیپال کوبھی اپنے دائرہ اثرمیں رکھا ہے،مگر اب بھوٹان کے ساتھ نیپال کابھی سفراِس دائرہ اثرسے نکلتادکھائی دے رہاہے۔ نیپال چین کے ساتھ کئی سمجھوتوں پر دستخط کرچکاہے، جن کے نتیجے میں سمندروں تک رسائی کے معاملے میں نیپال کی بیرونی تجارت اورنیپالی باشندوں کی حرکت پذیری پربھارت کاکنٹرول بہت حدتک ختم ہوکررہ گیا ہے اور بھوٹان میں بھی بھارت کے بارے میں بے چینی پھیل رہی ہے۔ بھارت کی اسٹریٹجی تیار کرنے والوں کاخیال ہے کہ نیپال کی سیاسی جماعتیں بھارتی مفادات کے خلاف نہیں جا سکتیں۔ یہ حقیقت نظراندازنہیں کی جاسکتی کہ نیپال کی کوئی بھی سیاسی جماعت ملک بھرمیں پائے جانے والے بھارت مخالف جذبات کے پیشِ نظر چین سے کیے جانے والے سمجھوتوں اورمعاہدوں کوکسی طورنظر انداز نہیں کرسکتی۔یوں اب خطے میں بھارت کی برتری ختم ہوتی جارہی ہے اورچین کامعاشی غلبہ رہی سہی کسر نکال رہاہے۔ افغانستان وہ اسٹریٹجک مقام تھاجہاں اپنے قدم مضبوطی سے جماکربھارت اپنے روایتی حریف پاکستان کوقابومیں رکھنے کے حوالے سے پاکستان میں دہشت گردی میں مصروف تھااور اب بھی ٹی ٹی پی کے کچھ گروپوں کی سرپرستی کررہاہے۔بھارتی میڈیامیں یہ خبریں بھی آتی رہی کہ افغانستان کے ذریعے بھارت بلوچستان میں بڑے انٹیلی جنس آپریشنزشروع کرنے والا ہے تاکہ مقبوضہ کشمیرمیں بڑھتی ہوئی بے چینی اور جدوجہد آزادی کودبایاجائے۔ایسے میں افغانستان سے بھارت کی شرم ناک واپسی نے پاکستان کواسٹریٹجک نقطہ نظر سے خاصی بہترپوزیشن میں پہنچاتودیاہے مگرسیاسی اورمعاشی ابتری نے پاکستان کواپنے چنگل میں پھانس رکھاہے۔یہ بات بھی کسی طورنظراندازنہیں کی جاسکتی کہ امریکہ سے اسٹریٹجک اتحادقائم کرکے بھارت نے مشرقِ وسطیٰ اور وسطِ ایشیاء تک رسائی بھی کھوئی ہے۔بھارت کے مسقبل قریب میں یوریشین سرزمین پرمعاشی اوراسٹریٹجک معاملات کے بڑے اتحادوں کاحصہ بن کربہت کچھ حاصل کرنے کے مواقع بھی اب ہاتھ سے جاچکے ہیں جبکہ اب پاکستان،ایران،ترکی،چین اورروس خطے میں معاشی واسٹریٹجک شراکتداریاں قائم کرنے کی کامیاب منصوبہ سازی کرنے کی پوزیشن میں ہیں۔ افغانستان میں تیزی سے بدلتے ہوئے حالات کی روشنی میں روسی قیادت نے حال ہی میں بڑی علاقائی طاقتوں سے گفت وشنیداور مشاورت کی مگراس عمل میں بھارت کوقطعاً شریک نہیں کیاجبکہ یوکرین کے معاملے میں بھارت نے امریکہ نوازہونے کے باوجوداس کی بات نہیں مانی۔اس سے اندازہ لگایاجاسکتاہے کہ بھارت کس حدتک تنہاہوچکاہے ۔ چین اور روس نے مل کر افغانستان میں تعمیرِنو، استحکام اورترقی کے لئے بنیادی نوعیت کے اقدامات کیے ہیں مثلا ًڈالرکاعمل دخل کم کرکے معاملات کوعلاقائی کرنسیوں کی مددسے طے کرنے پرتوجہ دی جارہی ہے۔امریکہ سے اسٹریٹجک معاہدے یاا تحاد کاحصہ ہونے کے باعث بھارت اس عمل میں حصہ نہیں لے سکتا۔2001ء کے بعدسے اب تک بھارت نے افغانستان میں تین ارب ڈالرسے زیادہ کی سرمایہ کاری کی ہے۔بھارت کی یہ سرمایہ کاری صحراکی ریت پر پانی ثابت ہوئی اوریہ خطیررقم بھارت میں شدید افلاس،بھوک اور بیماریوں سے نبردآزمااورتعلیم عامہ کی ناقص سہولتوں سے دوچاربچوں کامعیارِزندگی بلندکرنے پربھی خرچ کی جاسکتی تھی۔نئی دہلی کے پالیسی سازوں نے 3ارب ڈالرانڈین فارن سروس کے چندسینئر افسران کی خودکوگلوبل پارٹنرزپلیئرزکے طورپرپیش کرنے کی خواہش کی نذرکردئیے۔(جاری ہے)


تازہ ترین خبریں

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا جیل بھرو تحریک کا اعلان

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا جیل بھرو تحریک کا اعلان

عمران خان کی نااہلی متوقع،پی ڈی ایم ضمنی الیکشن میں حصہ نہ لے، فضل الرحمن کا شہباز شریف کو مشورہ

عمران خان کی نااہلی متوقع،پی ڈی ایم ضمنی الیکشن میں حصہ نہ لے، فضل الرحمن کا شہباز شریف کو مشورہ

قتل  ہوا  تو  ذمہ دار آصف زرداری، بلاول، شہباز اور رانا ثنا اللہ ہوں گے، شیخ رشید   کا دعویٰ

قتل ہوا تو ذمہ دار آصف زرداری، بلاول، شہباز اور رانا ثنا اللہ ہوں گے، شیخ رشید کا دعویٰ

وزیرخزانہ اسحاق ڈار اپنے معاشی اعداد وشمار درست کریں، شوکت ترین کی تنقید

وزیرخزانہ اسحاق ڈار اپنے معاشی اعداد وشمار درست کریں، شوکت ترین کی تنقید

ہرجانہ کیس ، افتخار چوہدری کے اعتراض پر عمران خان کیخلاف بینچ تبدیل

ہرجانہ کیس ، افتخار چوہدری کے اعتراض پر عمران خان کیخلاف بینچ تبدیل

انتقامی کارروائیوں سے معیشت بہتر نہیں ہوگی،حکومت الیکشن کا اعلان کرے مذاکرات  کیلئے تیار ہیں، فیصل جاوید

انتقامی کارروائیوں سے معیشت بہتر نہیں ہوگی،حکومت الیکشن کا اعلان کرے مذاکرات کیلئے تیار ہیں، فیصل جاوید

تحریک انصاف کے سابق ارکان قومی اسمبلی سے پارلیمنٹ لاجز کے کمرے خالی کروالئے گئے

تحریک انصاف کے سابق ارکان قومی اسمبلی سے پارلیمنٹ لاجز کے کمرے خالی کروالئے گئے

شیخ رشید  اسلام آباد کے کسی تھانے میں موجود نہیں، راشد شفیق کا دعویٰ

شیخ رشید اسلام آباد کے کسی تھانے میں موجود نہیں، راشد شفیق کا دعویٰ

حکومتی ترجیحات امن نہیں، مقدمات ہیں، ہمیں کسی اور کی جنگ کاایندھن بنایا جارہا ہے، مراد سعیدکا انکشاف

حکومتی ترجیحات امن نہیں، مقدمات ہیں، ہمیں کسی اور کی جنگ کاایندھن بنایا جارہا ہے، مراد سعیدکا انکشاف

مہنگائی میں اضافے سے عوام کو تکلیف پہنچی ،ہم سب جانتے ہیں، وزیرخزانہ اسحاق ڈار

مہنگائی میں اضافے سے عوام کو تکلیف پہنچی ،ہم سب جانتے ہیں، وزیرخزانہ اسحاق ڈار

سابق وفاقی وزیر شیخ رشید کیخلاف کراچی میں مقدمہ درج ، پولیس گرفتاری کیلئے اسلام آباد پہنچ گئی

سابق وفاقی وزیر شیخ رشید کیخلاف کراچی میں مقدمہ درج ، پولیس گرفتاری کیلئے اسلام آباد پہنچ گئی

کوہاٹ تاندہ  ڈیم خادثہ ، آخری طالب علم  کی لاش 6 روز بعد  نکال لی گئی،جاں بحق ہونیوالوں کی تعداد 53 ہو گئی

کوہاٹ تاندہ ڈیم خادثہ ، آخری طالب علم کی لاش 6 روز بعد نکال لی گئی،جاں بحق ہونیوالوں کی تعداد 53 ہو گئی

معروف اینکر عمران ریاض خان کیخلاف مقدمہ خارج ، عدالت کا فوری رہا کرنے کا حکم

معروف اینکر عمران ریاض خان کیخلاف مقدمہ خارج ، عدالت کا فوری رہا کرنے کا حکم

شیخ رشید کی مشکلات میں مزید اضافہ، مری میں بھی مقدمہ درج

شیخ رشید کی مشکلات میں مزید اضافہ، مری میں بھی مقدمہ درج